تحریک انصاف کاانتخابی اصلاحات کاحصہ بننے سےانکار

پارلیمانی کمیٹی کا بائیکاٹ

پاکستان تحریک انصاف نے انتخابی اصلاحات کاحصہ بننے سے انکار کرتے ہوئے پارلیمانی کمیٹی کا بائیکاٹ کردیا ہے۔

حکمران اتحاد نےعام انتخابات سےقبل انتخابی اصلاحات پر کام شروع کردیا ہے، اس سلسلے میں اسپیکر قومی اسمبلی راجا پرویزاشرف کو پارلیمانی کمیٹی تشکیل کرنی ہے۔

پارلیمانی کمیٹی کی تشکیل کے لیے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے نام اسپیکر راجا پرویز اشرف کو بھجوانے تھے۔تحریک انصاف نے کمیٹی کے لئے چیئرمین کو نام دینے سے انکار کرديا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے کمیٹی کے بائیکاٹ کے بعد حکومت نے تحریک انصاف کے بغیر ہی پارلیمانی کمیٹی تشکیل دینےکا فیصلہ کیا ہے۔

اسپیکر قومی اسمبلی کوشاہ زین بگٹی،غوث بخش مہراورکشور زہرا کے نام موصول ہوچکے ہیں تاہم مسلم لیگ (ن) اور پاکستان پیپلزپارٹی نے ابھی تک حتمی نام نہیں دیے۔

اسپیکر نے سیاسی جماعتوں کے پارلیمانی لیڈرز کوجلد نام بھجوانےکی ہدایت کردی ہے۔

تحریک انصاف نے انتخابی اصلاحات سے متعلق قانون سازی کی تھی جس کے تحت مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال اور پیپلز پارٹی کی شازیہ مری کا کہنا تھا کہ متعدد ترامیم آئین کی خلاف ورزی ہیں جنہیں یک طرفہ طور پر منظور کرایا گیا۔

تحریک انصاف کی قانون سازی کے تحت انتخابی فہرستوں کی تشکیل کی ذمہ داری الیکشن کمیشن سے لے کر نادرا کو دی گئی تھی۔

اس کےعلاوہ حلقہ بندیاں آبادی کے تناسب کے بجائے رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد کومدنظر رکھتے ہوئے کی جانی ہے۔

تحریک انصاف نے انتخابات میں الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے استعمال اوربیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے کے حوالے سے بھی قانون سازی کی تھی۔ پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) تحریک انصاف کے منظور کرائے گئے قوانین کی شدید مخالف ہیں۔

election reforms

Tabool ads will show in this div