ڈی سیٹ کئےگئےاراکین کو فیصلہ چیلنج کرنے کا حق ہے، مریم اورنگزیب

اراکین پنجاب اسمبلی نے پاکستان کے عوام کے لیے ووٹ دیا

وفاقی وزیراطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ 25 اراکین پنجاب اسمبلی نے پاکستان کے عوام کے لیے ووٹ دیا ہے اور ان کو الیکشن کمیشن کا فیصلے چیلنج کرنے کا حق ہے۔

الیکشن کمیشن کے فیصلے میں اسلام آباد میں وفاقی وزیراطلاعات مریم اورنگزیب اورپیپلز پارٹی کے ترجمان فیصل کریم کنڈی نے مشترکہ پریس کانفرنس کی۔

مریم اورنگزیب نے بتایا کہ منحرف کا مطلب حکومتی وعدے پورے نہ کرنے اور پالیسیوں سے انحراف کرنا ہوتا ہے تاہم تحریک انصاف کے رہنما پہلے الیکشن کمیشن پر حملہ کرنے کی باتیں کررہے تھے اور آج فیصلے کے بعد خیرمقدم کررہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے فیصلے سے پنجاب میں (ن) لیگ کے اقتدار پرکوئی فرق نہیں پڑے گا کیوں کہ 25 ارکان کے ڈی سیٹ ہونے سے حمزہ شہباز کی حکومت ختم نہیں ہوگی۔

مریم اورنگزیب نے وضاحت دی کہ پنجاب میں حکومت اور اتحادی ارکان کی تعداد 177 جبکہ اپوزیشن اتحاد 172 پر موجود ہے۔

انھوں نے یہ بھی کہا کہ یہ 25 رہنما ڈی سیٹ نہیں ہوئے بلکہ یہ طمانچے عمران خان کے منہ پر پڑے ہیں اور تحریک انصاف25 ارکان سے محروم ہوگئی ہے۔

وزیراطلاعات کا یہ بھی کہنا تھا کہ تحریک انصاف نے جنوبی پنجاب بنانے کا وعدہ کیا تھا مگر پنجاب کے عوام نے انھیں پونے چار سال بھگتا ہے اورفرح نے بے نامی ہوتے ہوئے بھی پنجاب کے عوام کو لوٹا۔

اس موقع پر فیصل کریم کنڈی نے کہا کہ کیا اسٹینڈنگ کمیٹیوں کے چئیرمین مراعات واپس کریں گے اور آپ یہ بتائیں گے کہ خیبرپختونخوا کے وزیراعلیٰ کا ہیلی کاپٹر کیوں استعمال کرتے ہیں۔آج ان بارہ موسموں میں عمران خان کے جیل جانے کا وقت ہے۔

فرح گوگی سے متعلق انھوں نے کہا کہ جس نےعافیہ صدیقی کی آواز اٹھانی تھی وہ فرح گوگی کا وکیل بن گیا، غریبوں کو مرغیوں اور کٹے پر لگا دیا گیا اورفرح گوگی کو پراپرٹی کا کاروباردے دیا۔

PUNJAB ASSEMBLY

Tabool ads will show in this div