جناح کنونشن کی نجکاری کے بجائے استعمال میں لایا جائے، سینیٹ کمیٹی

کنونشن سینٹر 7.59 ایکڑ پر مشتمل ہے۔ سی ڈی اے اس کی دیکھ بھال کررہا ہے

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے نجکاری کے اجلاس میں کہا گیا ہے کہ جناح کنونشن ملک کا اہم قیمتی اثاثہ ہے اس کی نجکاری کرنے کی بجائے بہتر تزئین و آرائش کر کے موثر استعمال میں لایا جائے اور اس کو برقرار رکھا جائے۔

سینیٹر شمیم آفریدی کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے نجکاری کا اجلاس ہوا، جس میں 22 مارچ کی سفارشات پر عمل درآمد کے علاوہ وزارت نجکاری سے مالی سال 2018-19، 2019-20اور 2020-21کے آڈیٹ پیرازپر تفصیلی بریفنگ کے علاوہ وزارت نجکاری سے پاک چائنا فرٹیلائزر کمپنی ہری پور اور جناح کنونشن سینٹر اسلام آباد کی نجکاری کے حوالے سے موجودہ صورتحال کا تفصیل سے جائزہ لیا گیا۔

قائمہ کمیٹی کو پاک چائنہ فرٹیلائزر کمپنی کے معاملے کے حوالے سے بتایا گیا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں 27 اپریل کو سماعت ہوئی ہے اور2009 کے بعد بڑا فیصلہ آیا ہے۔عدالت نے شیئرز کی ٹرانسفر پر حکم امتناعی جاری کیا ہے۔اس کے شیئرز فروخت نہیں کئے جاسکتے البتہ اس کمپنی کی 112 کنال زمین کی نیلامی کرکے مزدوروں کو اجرت دے دی گئی ہے۔

چیئرمین کمیٹی سینیٹر شمیم آفریدی نے کہا کہ پاک چائنہ فرٹیلائزر کمپنی کے اثاثے اربوں روپے کے ہیں جن کے شیئرز 456 ملین روپے میں فروخت کیے گئے۔ اس کمپنی کی زمین کی مالیت اربوں روپے میں ہے اور مشینری جو اس وقت فروخت کی گئی تھی اب اسکریپ کی قیمت اس سے دس گنا بڑھ چکی ہے۔جو بھی اس کو خریدے موجودہ وقت کی اصل قیمت میں فروخت کی جائے تاکہ قومی خزانے کو فائدہ ہو سکے۔

جناح کنونشن کی نجکاری کے حوالے سے قائمہ کمیٹی کو بتایا گیا کہ جناح کنونشن سینٹر 7.59 ایکڑ پر مشتمل ہے۔ سی ڈی اے اس کی دیکھ بھال کررہا ہے ۔ جناح کونشن سے سالانہ 46 ملین نقصان ہو رہا ہے۔اسے 2018 میں نجکاری کی فہرست میں ڈالا گیا تھا۔سی ڈی اے بورڈ کے پرائیوٹ ممبران نے اس کی نجکاری کی مخالفت کی ہے۔وزیر خزانہ نے 29 مارچ 2022 کو اس معاملے پر مشاورت کر کے حل نکالنے کی ہدایت کی تھی تاہم بعد میں حکومت کے جانے کے بعد کوئی بورڈ میٹنگ نہیں ہو سکی۔

چیئرمین کمیٹی سینیٹر شمیم آفریدی نے کہاکہ جناح کنونشن ملک کا اہم قیمتی اثاثہ ہے اس کی نجکاری کرنے کی بجائے بہتر تزئین و آرائش کر کے موثر استعمال میں لایا جائے اور اس کو برقرار رکھا جائے۔

سینیٹر انوار الحق کاکڑ نے کہاکہ دنیا بھر میں کنونشن سینٹر بہت معیاری اور خوبصورت بنائے گئے جس سے ملک کی روایات کا پتہ چلتا ہے مگر پاکستان میں یہ صرف کنکریٹ کی عمارت کھڑی کی گئی ہے۔

jinnah

Pakistan Latest News

Tabool ads will show in this div