سندھ میں جس کی لاٹھی ،اس کی گاڑی

Sindh Vehicle Virtual PKG 30-04

[video width="640" height="360" mp4="http://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/05/Sindh-Vehicle-Virtual-PKG-30-04.mp4"][/video]

جس کی لاٹھی اس کی بھینس کی کہاوت اب بدل گئی ہے کیونکہ سندھ سرکارمیں اب جس کی لاٹھی ہے اس کی گاڑی ہوگئی ہے سندھ کے سیاست دانوں کی پانچوں انگلیاں اسٹیئرنگ پر ہیں اور وہ بھی مضبوط گرفت کے ساتھ کیونکہ عہدہ جائے پر گاڑی نہ جائے۔ سندھ حکومت میں عہدہ تو چاردن کی چاندنی ہے مگر گاڑی کا ساتھ ہمیشہ رہتا ہے۔ سندھ سرکار کی ڈیڑھ سو گاڑیوں پر اہم سیاسی شخصیات اور افسران قابض ہیں۔

سندھ میں روایت ہے کہ جتنا سینئروزیر ہو گا اتنی زیادہ گاڑیاں ملیں گی۔ وزیرکو  ایک گاڑی ملتی  ہے لیکن سینئیر وزیر تعلیم نثارکھوڑو کے پاس ہیں دو دو گاڑیاں۔ وزیر صحت جام مہتاب بھی گاڑیوں کے معاملے میں بھی خوش نصیب ہیں کیونکہ ان کے پاس بھی دو دو گاڑیاں ہیں۔

زراعت کے وزیرعلی نواز مہر کے دور میں کھیتوں میں کچھ اگے نہ اگے لیکن ان کے پورچ میں گاڑیوں کی فصل پر بہار ضرور آرہی ہے۔الماس پروین کہنے کو سینیٹر ہیں لیکن گاڑی استعمال کررہی ہیں سندھ حکومت کی۔

رینجرز اختیارات کے معاملے پر سندھ حکومت کو مشوروں سے نوازنے والے مشیر بیرسٹر مرتضیٰ وہاب کے پاس بھی دو گاڑیاں ہیں۔ مشیر اصغر جونیجو بھی دو دو گاڑیوں کے مزے لوٹ رہے ہیں۔ روبینہ قائم خانی ایک سال سے وزیر تو نہیں ہیں لیکن چار چار سرکاری گاڑیوں پر سیر سپاٹے ضرور کررہی ہیں۔

اور تو اور سیاسی شخصیات کے یہ رنگ دیکھ کر سرکاری افسران کے بھی ڈھنگ بدل گئے ہیں جو عہدے سے تو ہٹ گئےہیں گاڑیوں کے مزے اب بھی لے رہے ہیں۔ سماء

MINISTERS

Tabool ads will show in this div