سوات یونیورسٹی میں لڑکےلڑکیوں کیساتھ گھومنےپرپابندی

714629-bookfairislamiauniversity-1401311728-311-640x480 سوات : سوات یونی ورسٹی کی انتظامیہ نے نیا قانون لاگو کرکے طالبان دور کی یاد تازہ کردی، نئے اور اچھوتے حکم نامے میں یونی ورسٹی کے لڑکے لڑکیوں کے ساتھ گھومنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ جنت نظیر وادی مگر وہاں کی یونی ورسٹی انتظامیہ کی عقل اندھیرے میں ڈوبی ہوئی ہے، جب ہی تو کچھ نہ سمجھ آیا اور طلبا اور طالبات کے سامنے گھومنے پھرنے پر پابندی عائد کردی۔ یونیورسٹی انتظامیہ کی جانب سے جاری نوٹی فکیشن میں اس بات کی سختی سے ہدایت کی گئی ہے کہ کیمپس کے اندر اور باہر طلباء و طالبات کے اکٹھے بیٹھنے اور چلنے پر پابندی ہوگی۔ خلاف ورزی کی صورت میں اسٹوڈنٹ کو پچاس ہزار روپے سے لے کر پانچ ہزار روپے تک جرمانہ ادا کرنا ہوگا اور ہنگامی طور پر ملاقات کے لیے ان کے والدین کو کال کی جائے گئی۔ وہ صوبہ جس کی حکمراں جماعت کے سرپرست تبدیلی اور روشن خیالی کا نعرہ لگاتے ہوں، ایسی صورت حال میں سوتا یونی ورسٹی انتظامیہ کی عجیب منطق خیبرپختونخوا حکومت کیلئے ایک کھلا چیلنج ثابت ہوگی۔ سماء

PTI

KPK

university

Tabool ads will show in this div