ترقیاتی فنڈز کی غیر منصفانہ تقسیم پر خورشید شاہ حکومت سے نالاں

Khurshid Shah In NA Isb Pkg 14-04

اسلام آباد : اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ ترقیاتی فنڈز کی غیر منصفانہ تقسیم پر حکومت پر برس پڑے، ایم کیو ایم ارکان نے وفاداریاں تبدیل کرانے کیلئے دباؤ ڈالنے پر قومی اسمبلی سے واک آؤٹ کیا۔

خورشید شاہ نے قومی اسمبلی میں ارکان پارلیمنٹ کے ترقیاتی فنڈز کا معاملہ اٹھایا، انہوں نے کہا کہ صرف پنجاب میں 2132 اسکیمیں رکھی گئیں، لاہور کے ایک ٹکڑے میں اورنج ٹرین بنائی جارہی ہے، آمر کو تو کچھ نہیں کہا جاسکتا لیکن جمہوری دور میں ایسا ہونا تشویش کی بات ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ ارکان پارلیمنٹ کو فنڈز نہیں دیئے جارہے، وفاق کو برابری کی بنیاد پر چلایا جائے، اُمید کرتا ہوں اسپیکر حکومت سے فنڈز کے معاملے پر جواب مانگیں گے۔ اسپیکر نے معاملہ وزیر خزانہ کے نوٹس میں لانے کی یقین دہانی کرا دی۔

ایم کیو ایم کے سلمان بلوچ نے کہا کہ نامعلوم نمبروں سے کالز آرہی ہیں، ارکان پر دباؤ ڈالا جارہا ہے، کہا جاتا ہے کہ ڈیفنس میں جاؤ اور وفاداری تبدیل کرو۔ متحدہ ارکان نے ایوان سے واک آؤٹ بھی کیا۔ تقریر کے دوران جذباتی ہونے پر اسپیکر نے سلمان بلوچ کی سرزنش بھی کی۔

محمد خان اچکزئی نے کہا کہ پارلیمنٹ ایک دوسرے کے کپڑے اتارنے کیلئے نہیں، 20 کروڑ عوام کا نمائندہ فورم ہے، جس کی داڑھی اور پگڑی ہے اسے دہشت گرد بنا دیا جاتا ہے، خطرناک بیج بویا جارہا ہے، پشتونوں کو تعلیم حاصل نہیں کرنے دی جارہی۔

نفیشہ شاہ نے کہا کہ وزیراعظم نے پاناما پیپرز پر خطاب تو کردیا، ایوان کو وضاحت دینا ضروری نہ سمجھا، وزیر داخلہ بھی اپوزیشن لیڈر کا جواب پریس کانفرنس میں دیتے ہیں، ایوان میں بات کیوں نہیں کی جاتی۔ سماء

KhursheedShah

NationalAssembly

Speaker Ayaz Sadiq

Tabool ads will show in this div