چھ ماہ میں بیرونی قرضوں میں2ارب ڈالر کا اضافہ

rupee_Dollar_543x275 اسلام آباد : موجودہ حکومت نے گزشتہ چھ ماہ میں پاکستان کے ذمہ بیرونی قرضوں میں دو ارب ڈالر کا اضافہ کر دیا، بیرونی قرضے اڑسٹھ ارب ڈالر تک پہنچ گئے۔ وزارت خزانہ نے رواں مالی سال کی پہلی ششماہی کی اقتصادی کارکردگی رپورٹ جاری کردی۔ وفاقی حکومت نے جولائی سے دسمبر دوہزار چودہ کے دوران تین سو تراسی  ارب روپے کے بیرونی قرضے لئے جو تین ارب تراسی کروڑ ڈالر کے مساوی ہیں۔ اس دوران ایک سو اناسی  ارب روپے کے قرضے واپس کئے گئے جو تقریبا ایک ارب اناسی  کروڑ ڈالر کے برابر ہیں۔ رواں مالی سال کی پہلی ششماہی کے اعدادوشمار کے مطابق رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بجٹ خسارہ پورا کرنے کیلئے 515ارب روپے کا قرضہ لیا گیا۔ غیرملکی ذرائع سے 203ار ب روپے ، ملکی ذرائع سے 311ارب روپے ، نان بینکنگ ذرائع سے 128 جب کہ بینکوں سے 183ارب روپے کے قرضے لئےگئے۔ چھ ماہ میں بیرونی ذرائع سے ترقیاتی منصوبوں کیلئے 80 ارب روپے جبکہ آئی ایم ایف سمیت پروگرام لونز کی مد میں 190 ارب روپے حاصل کئے گئے۔ سرکار نے گزشتہ مالی سال 1456 ارب روپے کا قرضہ لیا تھا جبکہ دوہزار تیرہ چودہ میں بھی 1388 ارب روپے قرضہ حاصل کیا گیا تھا۔ محض چھ ماہ میں بیرونی قرضوں میں دو ارب ڈالر کا اضافہ ہوگیا، پیپلز پارٹی نے اپنے آخری دو سال میں تین ہزار دوسوارب روپے کے قرضے لئے تھے، نواز حکومت بجٹ خسارہ پورا کرنے کیلئے اڑھائی سال میں تین ہزار تین سو ساٹھ ارب روپے سے زیادہ کے اندرونی و بیرونی قرضے لے چکی ہے۔ سماء

TAX

FINANCE MINISTRY

FOREIGN RESERVES

Foreign Debt

Tabool ads will show in this div