سپریم کورٹ: کمرہ نمبر ایک میں 5 کرسیاں لگادی گئیں

سیکیورٹی سخت کردی گئی، قیدی وین بھی موجود

موجودہ سیاسی صورتحال کے پیش نظر سپریم کورٹ آف پاکستان اور اسلام آباد ہائیکورٹ کھول دی گئیں، دونوں عدالتوں کے چیف جسٹس اور عملہ بھی عدالت پہنچ چکا ہے۔ ن لیگ کے اعظم نذیر تارڑ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ کے عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عملدرآمد کی درخواست لے کر سپریم کورٹ پہنچ گئے۔ سپریم کورٹ بار نے بھی دو مختلف درخواستیں جمع کرادیں۔

رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ آف پاکستان اور اسلام آباد ہائیکورٹ کے دروازے کھول دیئے گئے ہیں، چیف جسٹس عمر عطاء بندیال، جسٹس اعجاز الاحسن، جسٹس منیب اختر سپریم کورٹ پہنچ گئے جبکہ جسٹس جمال مندوخیل اور جسٹس مظاہر عالم بھی کچھ دیر میں پہنچ رہے ہیں۔

دوسری جانب اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ بھی عدالت پہنچ چکے ہیں۔

عملے کا کہنا ہے کہ موجودہ صورتحال کے پیش نظر عدالت کھولنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

سماء ٹی وی کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں اہم شخصیت کو ممکنہ طور پر عہدے سے ہٹانے کیخلاف درخواست دائر کی گئی ہے۔

سپریم کورٹ بار نے بھی 7 اپریل کے عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عملدرآمد کیلئے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کردی۔

سپریم کورٹ بار نے اپنی درخواست میں ڈپٹی اسپیکر کو بھی اجلاس کی صدارت سے روکنے کی استدعا کردی، ساتھ ہی کہا کہ منزہ حسن، امجد نیازی کو بھی اجلاس کی صدارت سے روکا جائے، صدر مملکت کو وزیراعظم اور کابینہ کی ایڈوائس پر عمل کرنے سے روکا جائے۔

دوسری جانب قومی اسمبلی میں 12 گھنٹے بعد بھی وزیراعظم کیخلاف تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ نہ کرائے جانے پر مسلم لیگ ن کے رہنماء اعظم نذیر تارڑ سپریم کورٹ پہنچ گئے، ان کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کی درخواست دائر کرنے آئے ہیں۔

تازہ اطلاعات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے سینئر صحافیوں سے بھی ملاقات کی، جس میں انہوں نے کہا کہ عسکری قیادت میں رد و بدل سے متعلق افواہیں بے بنیاد ہیں، کسی صورت ہار نہیں مانیں گے، آخری گیند تک مقابلہ کریں گے۔

سپریم کورٹ آف پاکستان نے وزیراعظم عمران خان کیخلاف تحریک عدم اعتماد پر آج (ہفتہ کو) پولنگ کا حکم دیا تھا، قومی اسمبلی کا اجلاس آج صبح تقریباً سارھے 10 بجے شروع ہوا تاہم 10 گھنٹے گزرنے کے باوجود ابھی تک پولنگ نہیں ہوسکی جبکہ اجلاس بھی کئی بار ملتوی کیا جاچکا ہے۔

No Confidence Motion

PM IMRAN KHAN

Tabool ads will show in this div