سندھ ہائیکورٹ میں محسن بیگ کےخلاف اب تک کی تحقیقات کاریکارڈطلب

اٹارنی جنرل نےعدالت کو بتایا کہ محسن بیگ کے گھرپرچھاپہ کاخاص پس منظر ہے

سندھ ہائیکورٹ نےمحسن بیگ کےخلاف اب تک کی تحقیقات کا ریکارڈ طلب کرلیا۔

سندھ ہائی کورٹ میں کراچی میں درج مقدمہ کےخلاف صحافی محسن بیگ کی درخواست کے سماعت ہوئی۔

اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ محسن بیگ کے گھر پر چھاپہ کا خاص پس منظر ہے، ہم نہیں چاہتے کہ کسی کے ساتھ زیادتی ہو۔

خالد جاوید نے بتایا کہ محسن بیگ کو اگست میں نوٹس دیا گیا تھا اور ان کے خلاف انکوائری جاری تھی جبکہ منی لانڈرنگ کا مقدمہ 16 فروری کو درج کیا گیا۔

اٹارنی جنرل نے مزید بتایا کہ میرے پاس اس کیس کی بہت زیادہ تفصیلات نہیں ہیں اور اتنا ہی مطالعہ کیا ہے، قانونی معاونت کے لیےحاضر ہوں لیکن ایف آئی اے کوتفتیش کرنے دیں،اس مرحلے پر مقدمہ ختم کرنا مناسب نہیں ہوگا، اسلام آباد ہائی کورٹ میں بھی اس حوالے سے معاملہ زیرالتوا ہے۔

محسن بیگ کے وکیل لطیف کھوسہ نے بتایا کہ ایک ہی دن میں تین تین مقدمات درج کردیئے گئے۔

جسٹس اقبال کلہوڑو  نے استفسار کیا کہ یہ بتائیں کہ اس کیس کی تفتیش کب مکمل ہوگی،آپ کے پاس رقم کی لین دین یارقم دینے والے سے رابطے کے شواہد ہیں؟ اگر10 لوگ رابطے میں تھے توکسی ایک کے بارے میں کیسے یقینی طور پر کہا جائے؟۔

عدالت نےایف آئی اےافسر سے مکالمہ کیا کہ محسن بیگ نےآپ کے خلاف رشوت طلب کرنے کی درخواست دی تھی،ہم آپ کو آخری بار متنبہ کررہے ہیں کہ اگر ٹھوس شواہد پیش نہ کرسکے تو سخت حکم جاری کریں گے،بظاہر ساری کارروائی بدنیتی پر مبنی لگتی ہے۔

عدالت نے ابھی تک کی تحقیقات کا مکمل ریکارڈ طلب کرلیا۔

لطیف کھوسہ نے عدالت کوکہا کہ ایف آئی اے کی ساری کارروائی بدنیتی پرمبنی ہے۔

اس پرجسٹس لطیف کلہوڑونے لطیف کھوسہ کو کہا کہ یہ ریکارڈ لارہے ہیں جس کوہم بھی دیکھیں گےاور آپ بھی دیکھیں گے،عدالت ریکارڈ کا جائزہ لےکرفیصلہ کریں گے۔

عدالت نے کیس کی سماعت 25 مارچ تک ملتوی کردی۔

SINDH HIGH COURT

MOHSIN BAIG

تبولا

Tabool ads will show in this div

تبولا

Tabool ads will show in this div