روس نےیوکرین باغیوں کےعلاقوں کوآزادریاست تسلیم کرلیا

روسی صدر نے جرمنی اور فرانس کو بھی فیصلے سے آگاہ کردیا

Outrage Grows as Russia Grants Passports in Ukraine's Breakaway Regions -  The New York Timesروس کی جانب سے مشرقی یوکرین کے دو علیحدگی پسند علاقوں کو آزاد ملک تسلیم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ دونوں علاقوں کو آزاد ریاست تسلیم کرنے کا اعلان کریملن کی جانب سے پیر کو کیا گیا۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ایسو سی ایٹڈ پریس کے مطابق روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے پیر کے روز مشرقی یوکرین میں واقع روسی زبان بولنے والے ڈونسک اور لہانسک کے دونوں علاقوں کو بطور آزاد ریاستیں تسلیم کیا۔ اعلان کے نتیجے میں اس خوف میں مزید اضافہ ہوا ہے کہ پوٹن یوکرین پر حملہ کرنے والے ہیں، تاہم باغیوں کی جانب سے اس خبر پر جشن منایا گیا۔

کریملن کے مطابق روسی فیصلے سے پیر کے روز پوٹن نے فرانس اور جرمنی کے سربراہان کو بھی آگاہ کیا، جب کہ امریکا کی جانب سے سخت ردعمل ظاہر کیا گیا ہے۔

سال 2014ء سے اب تک ڈونباس کے تنازعے پر روس کے حامی اور کیف کی افواج کے مابین لڑائی میں اب تک 14000افراد ہلاک ہوچکے ہیں، خندقوں سے کی جانے والی ان جھڑپوں کا آغاز روس نے کیا تھا، جس نے یوکرین کے کرائیمیا کے جزیرے کو ضم کردیا تھا۔

علیحدگی پسند اس بات کے خواہاں ہیں کہ وہ روس کے ساتھ دوستی کے معاہدوں پر دستخط کریں اور انھیں ہتھیاروں کی امداد دی جائے تاکہ وہ اپنا تحفظ کر سکیں۔ بقول ان کے، یوکرین کی ملٹری ہمارے خلاف اپنی جارحیت جاری رکھے ہوئے ہے۔

روسی پارلیمان نے گزشتہ ہفتے پوٹن سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ ڈونسک اور لہانسک کے عوامی جمہوریاؤں کو باضابطہ طور پر تسلیم کریں۔ دونوں نے 2014ء میں یوکرین سے آزاد ی کا اعلان کیا تھا، حالانکہ کوئی بھی ملک ان ری پبلکز کوبطور آزاد ریاستیں تسلیم نہیں کرتا۔

Russia will attack Ukraine if it joins NATO: Kremlin adviser | Daily Sabah
پوٹن نے کہا ہے کہ مشرقی یوکرین میں لڑائی کا کوئی پرامن حل ممکن نہیں۔ لیکن، ماسکو یہ بیان دیتا آیا ہے کہ اس کا یوکرین کے خلاف حملے کا کوئی ارادہ نہیں، حالانکہ اب بھی یوکرین کی سرحد پر ڈیڑھ لاکھ کے قریب روسی فوج تعینات ہے۔

 

اس سے قبل رائٹرزنے خبر دی تھی کہ روس نےالزام لگایا ہے کہ بکتر بند گاڑیوں میں سوار یوکرین کے فوجی تخریب کاروں نےروسی علاقے میں داخل ہونے کی کوشش کی؛ لیکن کیف نے اس الزام کوجعلی خبر قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا ہے۔ اس کے برعکس مغربی ملکوں نے الزام لگایا ہے کہ روس کی جانب سے اس طرح کی جھوٹی خبریں پھیلانے کا مقصد یوکرین پر حملے کا بہانہ ڈھونڈنا ہے۔

پیر کو روسی صدر نے اپنے اعلیٰ عہدے داروں کا ایک اجلاس طلب کیا جس میں مشرقی یوکرین کے علیحدگی پسند علاقوں کو تسلیم کیے جانے کے معاملے پر غور کیا گیا۔ صدارتی سیکیورٹی کونسل کا یہ اجلاس ایسے وقت ہوا جب مشرقی یوکرین سے جھڑپوں میں اضافے کی اطلاعات آ رہی ہیں، جس کے بارے میں مغربی ملکوں نے کہا ہے کہ اس سے روس کو یوکرین پر حملے کا بہانہ مل سکتا ہے۔

ادھر ایجنسی فرانس پریس کی ایک خبر میں بتایا گیا ہے کہ امریکہ نے اقوام متحدہ کو اطلاع دی ہے کہ روس نے یوکرین کے ایسے معروف افراد اور شخصیات کی ایک فہرست تیار کی ہے جنہیں یوکرین پر حملے کی صورت میں ہلاک یا پھر کیمپوں میں بند کردیا جائے گا۔ اے ایف پی نے بتایا ہے کہ اس نے اتوار کو عالمی ادارے کے حقوق انسانی کے سربراہ سے اس مراسلے کی نقل حاصل کی ہے۔

یہ مراسلہ ایسے وقت جاری کیا گیا ہے جب امریکہ نے اس الزام کا اعادہ کیا ہے کہ یوکرین کی سرحد کے قریب روسی فوج کی تعیناتی کے بعد جارحیت کے خطرات بڑھتے جا رہے ہیں۔ خط میں کہا گیا ہے کہ امریکہ کو اس صورت حال پر شدید تشویش لاحق ہے، جس سے ممکنہ انسانی حقوق کے بحران کا خطرہ ہے۔

RUSSIA - UKRAINE CRISIS SUMMARY | FOREIGN POLICY INSTITUTE
مراسلسے میں کہا گیا ہے کہ امریکہ کے پاس قابل اعتبار اطلاعات موجود ہیں جس سے اس بات کا واضح عندیہ ملتا ہے کہ روسی فوجیں یوکرین کی اہم شخصیات کی فہرستیں تیار کر رہی ہیں جنھیں فوجی قبضے کے بعد یا تو ہلاک کیا جائے گا یا پھر انہیں کیمپوں میں بند کیا جائے گا۔

خبر میں بتایا گیا ہے کہ مراسلے میں اقوام متحدہ کی ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق، مشیل بیچلر سے کہا گیا ہے کہ ''ہمارے پاس اس بات کی بھی قابل بھروسہ اطلاعات ہیں کہ پر امن احتجاج یا پھر شہری آبادی کی جانب سے پرامن مزاحمت کو روکنے کے لیے روسی افواج مہلک ہتھکنڈے استعمال کریں گی''۔

Russia raises pressure by sending more troops to Ukraine border | Financial  Times
مراسلے پر جنیوا میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کی کونسل میں تعینات امریکی سفیر باتشیبا کروکر کے دستخط ہیں۔ سفیر نے خبردار کیا ہے کہ یوکرین پر روسی حملے کی صورت میں اغوا اور اذیت دیے جانے جیسے ہتھکنڈے استعمال کیے جاسکتے ہیں، جن میں سیاسی منحرفین، مذہبی اور نسلی اقلیتوں اور دیگر افراد کو نشانہ بنایا جاسکتا ہے۔

ماسکو اس امکان کو مسترد کرتا آیا ہے کہ اس کا اپنے ہمسائے پر حملے کا کوئی ارادہ ہے، تاہم وہ اس بات کی ضمانت طلب کرتا رہا ہے کہ یوکرین کو نیٹو کا رکن نہیں بنایا جائے گا اور یہ کہ مغربی دفاعی اتحاد مشرقی یورپ سے اپنی فوج واپس بلائے گا، ان مطالبات کو مغربی ممالک مسترد کرتے رہے ہیں۔

RUSSIA

Kyiv

Donetsk

روس ، امریکا، یوکرین

Tabool ads will show in this div