عمران خان کو گھر بھیجنے پر سب متفق ہیں، بلاول

اداروں کو اپنے دائرہ اختیار میں رہنا چاہئے، چیئرمین پیپلزپارٹی

چیئرمین پیپلزپارٹی کے بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے پیپلز پارٹی اور پی ڈی ایم کے اختلافات اپنی جگہ لیکن عمران خان کو بھیجنے پر سب متفق ہیں، اداروں کو اپنے دائرے میں رہ کر ہی کام کرنا چاہئے۔

مظفرگڑھ کے علاقے سنانواں میں سابق وزیر خارجہ حنا ربانی کھر اور ان کے بھائی رکن قومیا سمبلی رضا ربانی کھر سے ان کے والد سابق صوبائی وزیر غلام محمد نور ربانی کھر کے انتقال پر اظہار تعزیت کے بعد واپس جاتے ہوئے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ کے حوالے سے پی پی پی کی جدوجہد 3 نسلوں پر مشتمل ہے اور آگے بھی 3 نسلوں تک جاری رہے گی۔

بلاول کا مزید کہنا تھا کہ عمران خان نے ہر پاکستانی کے جمہوری اور انسانی حق پر ڈاکہ مارا، جمہوریت، انسانی حقوق اور معاشی صورتحال میں بہتری لانی ہے تو عمران خان کو نکالنا پڑے گا اور جمہوری ہتھیار اپنا کر انہیں ہٹانا ہے۔

چیئرمین پی پی پی نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ عمران خان کو گھر بھیجنے کیلئے اپوزیشن جو قدم اٹھاسکتی ہے، وہ ضرور اٹھانا چاہئے، پیپلز پارٹی کے 27 فروری کے عوامی مارچ کی تیاریاں جنوری سے جاری ہیں جو اب آخری مرحلے میں پہنچ گئی ہیں، عوامی مارچ پی ٹی آئی کے اور اپوزیشن کے حلقوں سے گزرے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ ملک میں تبدیلی کے نام پر تباہی ہورہی ہے، معاشی بحران میں ہر طبقے کا معاشی قتل ہورہا ہے، مہنگائی اور بیروزگاری تاریخی سطح پر پہنچ گئی ہے، پیپلزپارٹی کا مطالبہ ہے کہ خان صاحب کو جمہوری طریقے سے ہٹایا جائے۔

سرائیکی صوبے سے متعلق سوال پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی حکومت میں سینیٹ کمیشن نے جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کی تجویز دی تھی اور پی پی پی نے اس پر عملدرآمد کرنے کی کوشش کی، پیپلزپارٹی کا مطالبہ آج بھی یہی ہے کہ پارلیمانی کمیشن پر عملدرآمد کرکے صوبہ بنایا جائے۔

bilawal bhutto zardari

PM IMRAN KHAN

وزیراعظم عمران خان

بلاول بھٹو زرداری

Tabool ads will show in this div