ملک میں 2 کروڑ 30 لاکھ بچے اسکول سے باہر ہیں،رپورٹ

بچوں کی مفت تعلیم حکومت کی آئینی ذمہ داری ہے

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/2022/02/ADB-Report-On-Education-Isb-Pkg-09-02.mp4"][/video]

پاکستان میں 5 سے 16 سال عمر کے 2 کروڑ 23 لاکھ بچے اسکول سے باہر ہیں، سندھ میں سب سے زیادہ 52 فیصد غریب بچے اسکول نہیں جاتے۔

 ایشیائی ترقیاتی بینک کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں 5 سے16 سال کے44 فیصد بچےاسکول نہیں جا رہے ۔ گذشتہ 19 سال میں اگرچہ پرائمری میں داخلے کی شرح 59 سے بڑھ کر 94 فیصد ہو گئی مگر صرف 70 فیصد بچے ہی پانچویں جماعت تک پہنچ پائے۔

ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان میں  تعلیم کے لئے جی ڈی پی کے2.9 فیصد کےمساوی بجٹ کو بھی ناکافی قرار دیدیا۔ رپورٹ کے مطابق سندھ اور بلوچستان میں پرائمری سے ہائی اسکول داخلے کی شرح سب سے کم ہے ، سندھ میں 58 فیصد اور صوبہ بلوچستان میں 78 فیصد لڑکیاں اسکول سے باہر ہیں۔

اے ڈی بی نے تعلیمی شعبے کا بجٹ بڑھانے اور لڑکیوں کی تعلیم کیلئے تربیت یافتہ اساتذہ اور انتظامی عہدوں پر خواتین کی شمولیت پر زور دیا ۔ کم آمدن والے طبقے کیلئے کیش ٹرانسفر پروگرام میں توسیع کی سفارش بھی کی ۔

ایشیائی ترقیاتی بینک ایجوکیشن سیکٹر میں حکومت کی کارکردگی سے تو مطمئن نہیں مگر اس نے نجی شعبے کے کردار کو سراہا ۔ رپورٹ کے مطابق 2018 تک پاکستان میں 37.9 فیصد تعلیمی اداروں کا تعلق نجی شعبے سے ہے، مجموعی داخلوں میں بھی نجی شعبے کا حصہ 44.3 فیصد ہے۔

ADB report

Education rate

Tabool ads will show in this div