کسی کوغیرآئینی،غیرجمہوری طریقےسے گھرنہیں بھیجناچاہتے،یوسف رضا

ان ہاؤس تبدیلی پربات ہوسکتی ہے
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/01/Yousaf-Raza-Gillani-Exclusive-Enterview-Mul-25-01.mp4"][/video]

سابق وزیراعظم اور سینیٹ میں اپوزیشن لیڈر سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ کسی کوغیرآئینی اور غیرجمہوری طریقے سے گھر نہیں بھیجنا چاہتے تاہم ان ہاؤس تبدیلی پربات ہوسکتی ہے۔

سماء ملتان کے بیوروچیف عامر اقبال سے خصوصی بات کرتے ہوئے یوسف رضا گیلانی کا کہنا تھا کہ دراڑیں اپوزیشن میں نہیں بلکہ حکمران جماعت اور اتحادیوں میں ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ ملک میں صدارتی نظام کی کوئی بات نہیں ہوئی، ان ہاؤس تبدیلی پربات ہوسکتی ہے تاہم کسی کوغیرآئینی اور غیرجمہوری طریقے سے گھر نہیں بھیجنا چاہتے۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ پیپلزپارٹی 27فروری کا لانگ مارچ سوچ سمجھ کر کررہی ہے،مارچ  پُرامن اور جمہوری طریقےسے آئین کےمطابق ہوگا۔

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ جنوبی پنجاب صوبہ کیلئے سینيٹ میں آواز بلند کی،اس کا 3سال سےکوئی ذکرنہیں تھا۔

سابق وزیراعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ گورنر پنجاب چوہدری سرورکی وزیراعظم بنانے کی بات سیاق وسباق سے ہٹ کر کی گئی۔

یوسف رضا گیلانی کا کہنا تھا کہ عمران خان اپوزیشن کو دھمکی نہیں دےسکتے،یہ بازوہمارے آزمائے ہوئے ہیں، لگتاہےکہ وہ شکست تسلیم کرچکے ہیں اوروہ اب زیادہ خطرناک ہیں۔

انھوں نےوزیراعظم کو مشورہ دیا کہ وہ غصہ نہیں بلکہ الیکشن کی تیاری کریں۔

سینیٹ انتخابات سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ پہلی مرتبہ حکومت سے ہٹ کر سینیٹ انتخاب جیتا،سینيٹ الیکشن پی ٹی آئی کی حمایتی جماعتوں کے ووٹ کےبغیرکیسےجیت سکتاتھا،اپنی جماعت سے ہٹ کردوسری جماعتوں سے ووٹ حاصل کیے۔

انھوں نے مزید کہا کہ جب اپوزیشن اتحاد(پی ڈی ایم) ایک تھی تو بہت ساری فتوحات حاصل کیں۔

Tabool ads will show in this div