کھٹارا بسوں کے شہر میں’’گرین لائن‘‘ ایک نعمت

کراچی گرین لائن میں مسافروں کی تعداد بڑھنےلگی

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/01/Green-Line-Passenger-KHI-PKG-FOR-CHUNK-22-01-REms.mp4"][/video]

کراچی کی ٹوٹی سڑکوں پر چلتی کھٹارا بسوں کے مقابلے پر گرين لائن سروس کسی نعمت سے کم نہيں ہے جس نے سرجانی سے نمائش تک شہريوں کو آرام دہ سفر کی سہولت مہيا کردی ہے۔

کراچی کے گلے سڑے ناکارہ اور بوسيدہ ٹرانسپورٹ کے نظام ميں گرين لائن بس سروس تازہ ہوا کا جھونکا ثابت ہورہی ہے۔ جوں جوں وقت گزررہا ہے شہري رش سے بچنے اور منزل پر وقت پر پہنچنے کيلئے اس سروس کا استعمال کررہے ہيں جس کی وجہ سے گرین لائن پر مسافروں کی تعداد بتدريج بڑھتی جارہی ہے۔

گرين لائن پر ابتدائی تين دنوں ميں ہی يوميہ مسافروں کی تعداد 32 ہزار تک پہنچ گئی تھی،شہری اس جدید بس سروس کی سہولت سے نہ صرف فائدہ اٹھارہے ہيں بلکہ مطمئن بھی ہیں۔ ٹرانسپورٹ کے اس باکفايت نظام کا فائدہ اٹھانے والوں کا رش ويک اينڈ پر بڑھ جاتا ہے اور خاص طور پر گرين لائن کے نمائش اسٹيشن پر مسافروں کی قطاريں لگ جاتی ہيں۔

گرين لائن کے پروجیکٹ ہیڈ آفتاب عالم کہتے ہيں کہ بس سروس پر اتوار کے علاوہ پورا ہفتہ ہی رش رہتا ہے جبکہ پورا دن ہي رش کے اوقات رہتے ہيں۔ انہوں نے کہا کہ پير سے ہفتے تک رش ہوتا ہے تاہم اتوار کو چھٹی کی وجہ سے پيک ڈے آف ہوتا ہے۔

رش اور مسافروں کی تعداد بڑھنے کے باوجود شہريوں کی بڑی تعداد ايسی ہے جو سرجانی سے نمائش کے درميان چلنے والی گرين لائن بس سروس کو استعمال نہيں کررہی ہے۔

پروجیکٹ ہیڈ آفتاب عالم گرين لائن پر مسافروں کی کم تعداد کے تاثر کو درست نہيں سمجھتے

بلکہ ان کا کہنا ہے کہ يوميہ سروس سے 50 ہزار مسافر سفر کررہے ہيں آگاہی آنے کے ساتھ يہ تعداد بڑھتی چلی جائيگی۔

گرین لائن بس کے منتظمین کو ديگر شہروں ميں چلنے والي ميٹرو بس سروس کے تجربے سے بھی فائدہ پہنچ رہا ہے، اور وہ پراميد ہيں کہ جلد یومیہ مسافروں کا مقررہ ہدف حاصل کرلیں گے۔

ہیڈآفتاب عالم کا کہنا تھا کہ مسافرآہستہ آہستہ بڑھيں گے اميد ہے جلدايک لاکھ 30ہزار ہدف حاصل کرليں گے اس سے زيادہ مسافرہوئے تو بھی بسيں موجود ہيں۔

کراچی کے ٹرانسپورٹ نظام سے پريشان شہری مجموعی طور پر گرين لائن سروس سے مطمئن ہيں،

ليکن اپنے روٹ کيلئے بسيں نہ چلانے کی شکايت بھی کرتے ہيں جبکہ زائد کرائے کی شکايت کرنے والوں کو منتظمين نے مشورہ ديا ہے کہ وہ کارڈ کی سہولت سے فائدہ اٹھاکر کم کرائے ميں اس بہترين سہولت کا فائدہ اٹھاسکتے ہيں۔

Tabool ads will show in this div