سماجی رکاوٹیں ختم، خواتین پراپرٹی بزنس میں بھی آگئیں

ہر فیلڈ میں ایک جیسے چیلنج ہیں، خاتون پراپرٹی ڈیلر

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/01/Women-Property-Dealers-Lhr-Pkg-22-01.mp4"][/video]

پاکستانی خواتین زراعت کے علاوہ  تعلیم اور صحت کے شعبوں تک ہی محدود تھیں، اب جائیداد کی خرید و فروخت کے شعبے میں بھی خواتین کی بڑی تعداد متحرک نظر آتی ہے۔

پاکستان میں پہلے خواتین زراعت، تعلیم، صحت اور دیگر دستکاریوں تک محدود تھیں تاہم کسی بھی شعبے میں عورتوں کیلئے کام کرنا مشکل نہیں رہا، لاہور میں بھی خواتین نے ریئل اسٹیٹ کے کاروبار سے منسلک ہوگئیں۔

خواتین کہتی ہیں کہ  اگر  خاندان ساتھ دے  تو کوئی کاروبار بھی مشکل نہیں رہتا، پہلے والد اور اب شوہر بھی بھرپور مدد کررہے ہیں، زیادہ سے زیادہ خواتین کو اس شعبے میں آنا چاہئے۔

خاتون کا کہنا ہے کہ  دیگر شعبوں کی طرح  اس فیلڈ میں بھی  ان کو مختلف چیلینجز  کا سامنا کرنا پڑتا ہے، مگر  چیلنجز کی نسبت مواقع کہیں زیادہ ہیں، اب لوگ خواتین اسٹیٹ ڈیلرز پر بھی اعتماد کرنا شروع ہوگئے ہیں۔

اقتصادی ماہرین کہتے ہیں کہ اگر پاکستان کی  ترقی کو تیز کرنا ہے تو اس کیلئے خواتین کو ریئل اسٹیٹ سمیت مختلف شعبوں میں آنا ہوگا۔

Tabool ads will show in this div