جرمنی کو معیشت کی بہتری کیلیے 4لاکھ افراد کی ضرورت

کم سے کم اجرت فی گھنٹہ 12یورو کرنے پر اتفاق
فوٹو: اے ایف پی
فوٹو: اے ایف پی
[caption id="attachment_2504847" align="alignnone" width="800"]Germany فوٹو: اے ایف پی[/caption]

جرمنی کی نئی مخلوط حکومت ملک کے اہم شعبوں میں آبادیاتی عدم توازن اور مزدوروں کی کمی کو پورا کرنے کے لیے بیرون ملک سے ہر سال 4لاکھ افراد کو ملازمت دینا چاہتی ہے۔

غیر ملکی خبر ایجنسی رائٹرز کے مطابق کو-گورننگ فری ڈیموکریٹس (ایف ڈی پی) کے پارلیمانی لیڈر کرسچن ڈوئیر نے بزنس میگزین ورٹس شافٹ ووچے کو بتایا کہ ’ملک میں ہنرمند مزدورں کی کمی کافی سنگین ہوگئی ہے جو ہماری معیشت کو سست کر رہا ہے‘۔

کرسچن ڈویئر کا کہنا تھا کہ ’ہم صرف ایک جدید امیگریشن پالیسی کے ساتھ عمر رسیدہ افرادی قوت کے مسئلے پر قابو پاسکتے ہیں جس کے لیے ہمیں جلد از جلد 4لاکھ افراد کو بیرون ملک سے ملازمت کے لیے رکھنا ہوگا‘۔

جرمنی میں کام کو پرکشش بنانے کے لیے نئی مخلوط حکومت نے کم سے کم اجرت فی گھنٹہ 12 یورو یعنی 13.60 ڈالر پر اتفاق کیا ہے۔

آجر کے لیے دوستانہ جرمن اکنامک انسٹی ٹیوٹ کا تخمینہ ہے کہ اس سال افرادی قوت میں 3لاکھ سے زیادہ افراد کی کمی واقع ہو جائے گی کیونکہ لیبر مارکیٹ میں آنے والے نوجوانوں کی نسبت بڑی عمر کے افراد ریٹائرڈ ہو رہے ہیں۔

یہ فرق 2029 میں بڑھ کر 6لاکھ 50ہزار سے زیادہ ہونے کی امید ہے۔

Tabool ads will show in this div