کابل:طالبان کا مبینہ طور پر خواتین مظاہرین پرکالی مرچ کا چھڑکاؤ

افغانستان میں لڑکیوں کے سیکنڈری اسکول اور یونیورسٹیاں بند ہیں

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں طالبان فورسز نے اتوار کے روز خواتین کےلیے روزگار اور تعلیم کا مطالبہ کرنے والے خواتین مظاہرین کے ایک گروپ پر کالی مرچ کا سپرے کردیا ہے۔

خبررساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق قریباً 20 خواتین کابل یونیورسٹی کے سامنے جمع ہوئیں اور انھوں نے مساوات اورانصاف کا نعرہ لگایا۔

طالبان حکام نے اگست میں کابل میں اقتدارپر قبضہ کرنے کے بعد خواتین پر بعض پابندیاں عاید کردی ہیں اورانھیں روزگار اور تعلیم کے حصول کی اجازت تاحال نہیں مل سکی ہے۔

رپورٹ کے مطابق مظاہرے میں شریک ایک خاتون کا کہنا تھا کہ کابل یونیورسٹی کے قریب طالبان کی تین گاڑیاں آئیں اور ایک گاڑی میں سوار جنگجوؤں نے ہم پرکالی مرچ کا سپرے کیا جس سے میری دائیں آنکھ میں جلن ہونے لگی۔

مظاہرین کا کہنا تھا کہ سپرے کے بعد ان میں سے ایک عورت کو اسپتال لے جانا پڑا جس سے اس کی آنکھوں اور چہرے پر الرجی کا رد عمل ہوا ہے۔ رپورٹ کے مطابق طالبان نے ایک شخص کا موبائل فون بھی ضبط کرلیا جو مظاہرے کی ویڈیو بنا رہا تھا۔

مظاہرے میں شریک خواتین کا کہنا تھا کہ طالبان جنگجو نے متعدد گاڑیوں میں جائے وقوعہ پر پہنچ کر احتجاجی خواتین کو منتشر کردیا۔

واضح رہے کہ طالبان حکام نے سرکاری شعبے کی ملازم خواتین کو تاحال کام پر واپس جانے سے روک دیا ہے، سرکاری یونیورسٹیاں بند ہیں جبکہ لڑکیوں کے اکثر سیکنڈری اسکول ابھی تک دوبارہ نہیں کھولے گئے ہیں۔

Tabool ads will show in this div