کروناوائرس:کراچی ميں مثبت کيسز35.30 کی شرح پرپہنچ گئے

صوبائی ٹاسک فورس کا اجلاس آج ہورہا ہے

پاکستان میں کرونا کی پانچويں لہر کے دوران کيسز ميں تيزی سے اضافہ ہورہا ہے۔

محکمہ صحت سندھ کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ کراچی ميں مثبت کيسز ايک بار پھر بلند ترين سطح پينتيس اعشاريہ تين صفر کی شرح پر پہنچ چکے ہیں۔

محکمہ صحت کےمطابق کراچی میں گزشتہ24گھنٹوں میں2846کیسز رپورٹ ہوئے اورکرونا کے24میں سے23کیسزمیں اومی کرون کی تصدیق ہوئی۔

کراچی میں اومی کرون کےاب تک 430 کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں۔ محکمہ صحت کے مطابق ضلع شرقی میں سب سے زیادہ کیسز سامنے آئے ہیں جب کہ وسطی اور غربی میں دوسرے اور تیسرے نمبر پر سب سے زیادہ کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں۔

سندھ میں کرونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کےلیے صوبائی ٹاسک فورس کا اجلاس آج ہورہا ہے جس میں کرونا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے تجاویز پیش کی جائیں گی۔

این سی او سی نے بتایا ہے کہ ملک میٕں کرونا سے مزید 4 مریض انتقال کرگئے اور مجموعی اموات کی تعداد29 ہزار3ہوگئی ہے۔

این سی اوسی نے مزید بتایا کہ 24گھنٹے میں کرونا کے مزید4 ہزار286 نئے کیسز رپورٹ ہوئے۔ اس دوران کرونا کے52 ہزار522 ٹیسٹ کیے گئے اورمثبت کیسز کی شرح 8.16 فیصد ریکارڈ کی گئی۔

مراد علی شاہ کا بیان

 گذشتہ روز وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کراچی میں کرونا کے بڑھتے کیسز پر لاک ڈاؤن سے متعلق کوئی بھی اقدام این سی او سی کی ہدایت سے مشروط کردیا۔

انہوں نے کہا کہ کرونا کیسز میں اضافے کے باوجود اسپتالوں میں دباؤ میں اضافہ نہیں ہوا اور وینٹی لیٹر پر مریضوں کی تعداد بھی کم ہے۔

مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ شہر میں لاک ڈاؤن سے متعلق فیصلہ این سی او سی کی ہدایات پر کیا جائے گا اور تعلیمی اداروں پر پابندیوں سے متعلق ہماری نظریں این سی او سی پر ہیں۔

پنجاب میں کرونا کا پھیلاؤ

ادھر لاہور سمیت پنجاب میں بھی کرونا کا پھیلاؤ تیز ہوگیا ہے۔

ایک روز کے دوران پنجاب میں کرونا سے 2 اموات رپورٹ ہوئیں جن میں سے لاہور سے ایک اور راولپنڈی سے ایک مریض کا انتقال ہوا۔

محکمہ صحت پنجاب نے مزید بتایا کہ 24 گھنٹے کے دوران پنجاب سے 722 کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں جن میں سے راولپنڈی سے 159 کیسز رپورٹ ہوئے اور مثبت کیسز کی شرح 10 ہوگئی ہے۔

محکمہ صحت پنجاب نے یہ بھی بتایا کہ لاہور سے کرونا کے 520 کیسز رپورٹ ہوئے اورمثبت کیسز کی شرح 8.5 ریکارڈ کی گئی۔

بوسٹر ڈوز سے متعلق اطلاع

واضح رہے کہ این سی او سی کے مطابق ملک میں انسداد کرونا کی بوسٹر ڈوز کیلئے عمر کی حد کم کر کے 18 سال کردی گئی ہے۔

ملک بھر میں 15 جنوری سے18 سال کی عمر کے افراد بوسٹر ویکسین لگوا سکتے ہیں، این سی او سی کا کہنا تھا کہ بوسٹر ویکسین پہلی ویکسینیشن مکمل ہونے کے6  ماہ بعد لگوائی جاسکتی ہے۔

این سی او سی نے مزید کہا کہ بوسٹر ویکسین بلامعاوضہ لگوائی جا سکتی ہے۔

ائیرٹریول پالیسی

اس کے علاوہ این سی او سی نے بیرون ملک سے پاکستان آنے والے مسافروں کیلئے ائیرٹریول پالیسی میں تبدیلی کردی ہے۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کی ہدایت کے مطابق نئی ٹریول پالیسی پر عمل درآمد کے آغاز کے لیے نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا۔

این سی او سی کے مطابق کسی بھی ملک سے کرونا وائرس کے ویکسین شدہ غیر ملکی اور پاکستانی شہری اب پاکستان آسکتے ہیں۔

این سی او سی نے بتایا کہ پاکستان نے کرونا کا پھیلاؤ روکنے کے لیے مختلف ممالک کے لیے مختص کردہ کیٹگری بی اور سی ختم کردی ہے۔

این سی او سی نے پاکستان آنے والے تمام مسافروں کیلئے ویکسی نیشن لازمی قرار دے دی۔

Tabool ads will show in this div