نوسربازوں کا پلاسٹک کے انگوٹھے بناکر سمز نکلوانے کا انکشاف

ایف آئی نے گروہ گرفتارپکڑلیا
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/01/FIA-Silicons-Thumb-2100-Lhr-Pkg-14-01.mp4"][/video]

ایف آئی اے سائبر کرائم  نے ایک ایسا گروہ پکڑ لیا جو سادہ لوح افراد کے انگوٹھوں کے نشان سے پلاسٹک کے انگوٹھے بنا کر موبائل فون کی سمز جاری کرواکر جرم کا بازار گرم کردیتا تھا۔ 

سائبرکرائم سرکل ایف آئی اے کے مطابق ملزمان ان جعلی انگوٹھوں سےاصلی سمیں جاری کرواتے اور پھر ان میں سے کوئی اعلی سرکاری افسر، کوئی جج اور کوئی انعامی اسکیم والا بن کر لوگوں کو جھانسہ دیتا۔ 

ملزمان کا کہنا ہے کہ وہ موبائل کمپنیوں کے فرنچائز سے نان ايکٹو سم کی لسٹ ليتے تھے اور اس کے علاوہ ان لوگوں کو فرنچائز کی جانب سے بائيو ميٹرک ڈيوائس بھی مل جایا کرتی تھی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ وہ لوگ مختلف طریقوں سے لوگوں کے پرنٹس ليتے اور اسے سليکون ميں منتقل کرکے بند نمبرز ایکٹیو کروالیا کرتے تھے۔

ڈپٹی  ڈائريکٹر سائبرکرائم رب نواز نے سماء کو بتایا کہ اب تک ايسی ہی سمز سے فنانشل فراڈ کے 10 ہزار سے زائد واقعات رپورٹ ہوچکے ہيں۔

Tabool ads will show in this div