مری میں ایک ہفتے بعد دھوپ نکل آئی،برف ہٹانے کا کام جاری

سڑکوں سے برف ہٹانے کا کام جاری

ملکہ کوہسار مری میں برفباری کا سلسلہ تھم جانے کے بعد آج دھوپ نکل آئی ہے لیکن سردی کی شدت میں کوئی کمی نہیں ہوئی، جب کہ تمام اہم سڑکوں سے برف ہٹانے کا کام جاری ہے، سانحہ مری میں جاں بحق افراد کی تعداد 22 ہوگئی۔

 دیہی علاقوں کی بجلی 4 روز سے معطل ہے، جب کہ شہری علاقوں کی رات گئے بجلی بحال ہوئی، مری کی ایکسپریس وے پر جمی برف کے باعث مزید پھسلن سے مری اسلام آباد جانے والے راستے خطرناک ہوگئے۔

ایکسپریس وے پر مری سے اسلام آباد تک کا سفر مشکل ہوگیا، پھسلن کے باعث گاڑیوں کی روڈ گرپ تقریباً ختم ہوگئی، پائپ لائنوں میں پانی جم جانے سے سیاحوں اور مقامی افراد کو مشکلات کا سامنا ہے۔

گزشتہ روز ہفتہ 8 جنوری کو سانحہ مری میں اسلام آباد، لاہور، گوجرانوالہ، پنڈی، مردان اور کراچی سے تعلق رکھنے والے سیاحوں کو طوفانی برف باری نے موت کی آغوش میں پہنچا دیا۔ سانحے میں جاں بحق افراد کی میتیں ان کے آبائی علاقوں کو منتقل کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔

وزیراعلیٰ بزدار مری پہنچ گئے

مری میں امدادی سرگرمیوں کا جائزہ لینے کیلئے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار مری پہنچ گئے ہیں۔

وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار نے مری کے متاثرہ علاقے کا فضائی دورہ کیا اور وہاں پر جاری امدادی سرگرمیوں کاجائزہ لیا، حکام کی جانب سے وزیراعلی کو متاثرہ علاقوں میں ریلیف آپریشن پر بریفنگ دی گئی۔

وزیرقانون راجہ بشارت ،  معاون خصوصی برائے اطلاعات حسان خاور، چیف سیکرٹری، آئی جی پولیس اور دیگر متعلقہ حکام بھی اس موقع پر ان کے ہمراہ تھے، وزیراعلیٰ کو ریلیف کمشنر نے امدادی سرگرمیوں پربریفنگ دی۔

قبل ازیں وزیراعلی پنجاب رات گئے تک مری ریسکیو آپریشن کی نگرانی کرتے رہے، ترجمان پنجاب پولیس کے مطابق مری سے رات گئے 600 سے 700 گاڑیوں کو نکالا گیا۔

راولپنڈی پولیس، ضلعی انتظامیہ اور پاک فوج کے جوان رات بھر متحرک رہے، مری کی بڑی شاہراہوں پر شدید برفباری کی وجہ سے 20 سے 25 بڑے عمارتی درخت گرے جس سے راستے بلاک ہو گئے تھے، تمام سیاحوں کو رات ہونے سے پہلے ہی ریسکیو کرکے محفوظ مقامات پر پہنچا دیا گیا تھا، چوبیس گھنٹوں میں 500 سے زائد فیملیز کو ریسکیو کیا گیا۔

نوید اقبال سمیت 14 افراد کی میتیں لواحقین کے حوالے

سانحے میں جاں بحق اے ایس آئی نوید اقبال سمیت ان کے گھر کے 8 افراد کی میتیں مری سے اسلام آباد پہنچائی گئیں۔ نوید اقبال کی بیٹی شفق، دعا، اقراء، بیٹے احمد کے علاوہ ان کی بہن قرۃ العین، بھانجی حوریہ اور بھتیجے آیان کی میت بھی اسلام آباد پہنچائی گئی۔

ان 8 افراد کی نمازِ جنازہ آج ڈھائی بجے تلہ گنگ کے موضع دودیال میں ادا کی جائے گی اور تدفین مقامی قبرستان میں ہوگی۔ لاہور کے رہائشی ظفر اقبال اور ان کے کزن معروف کی میتیں بھی آج صبح گھر پہنچا دی گئیں۔

ویڈیو:مری جیسی صورتحال میں پھنس جائیں تویہ باتیں یادکریں

مری میں داخل ہونے پر پابندی تا حال برقرار ہے، تاہم ايمرجنسی وہيکلز کے ليے راستہ کھولا جا رہا ہے، بھارہ کہو اور ٹول پلازہ پر لگائے گئے ناکوں پر موجود سیکیورٹی فورسز ہر قسم کے غیر متعلقہ ٹریفک کو روک رہی ہیں۔

موسم کی صورت حال

ملکہ کوہسار مری میں برفباری کا سلسلہ تھم جانے کے بعد آج وہاں دھوپ نکل آئی ہے لیکن سردی کی شدت میں کوئی کمی نہیں ہوئی، انتظامیہ کاتمام اہم سڑکوں سے برف ہٹانے کا کام اور پھنسی ہوئی گاڑیوں کو نکالنے کیلئے آپريشن جاری ہے، لوگوں کی مدد کیلئے پاک آرمی نے کلڈنہ میں ریسکیو سینٹر قائم کردیا۔

مری جانے والے راستے ایکسپریس وے پر پھلسن میں اضافہ ہوگیا ہے۔

Murree snowfall forces motorway police to close Expressway | Pakistan |  Dunya News

مری ایکسپریس وے

مری کی ایکسپریس وے پر جمی برف کے باعث مزید پھسلن سے مری اسلام آباد جانے والے راستے خطرناک ہوگئے، ایکسپریس وے پر مری سے اسلام آؓباد تک کا سفر مشکل ہوگیا، پھسلن کے باعث گاڑیوں کی روڈ گرپ تقریباً ختم ہوگئی۔

امدادی کارروائیاں

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق فوجی انجینیرز کے دستے بلڈوزر کی مدد سے گلڈنہ اور باریاں روڈ سے برف ہٹارہے ہیں۔

آئی ایس پی آر کے مطابق کیمپوں میں لوگوں کو کھانا، پانی، چائے اور دیگر ضروری سامان فراہم کیا جارہا ہے، ایف ڈبلیو او کے جوان بھی مشینری کی مدد سے روڈ کھولنے میں مصروف عمل ہیں۔

دوسری جانب مسلسل برف باری کے باعث امدادی کارروائیوں میں مشکلات درپیش آرہی ہیں، چیئرمین این ڈی ایم اے کے مطابق یہ کہنا قبل از وقت ہے کہ آپریشن کب تک مکمل ہوگا۔

نتھیاگلی

نتھیاگلی ایوبیہ ٹھنڈیانی میں برف باری کا سلسلہ تو تھم گیا سردی کی شدت برقرار ہے۔ نتھیاگلی میں منفی چھ ایوبیہ میں منفی دو ٹھنڈیانی میں منفی دو درجہ حرارت ریکارڈ کیا گیا، جہاں سیاح چھ فٹ برف کے نيچے اپنی گاڑیاں ڈھونڈنے اور مقامی افرد دکانوں کے آگے سے برف ہٹانے میں مصروف رہے۔

اداروں کی نااہلی سانحہ مری کا سبب بنی، محمکہ موسمیات

ایبٹ آباد مری روڈ سے بھی برف ہٹانے کا کام جاری ہے، سڑک کلیر نہ ہونے پر سیاحوں اور مقامی افراد کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، جب کہ گليات ميں تين روز سے بجلی کی فراہمی معطل اور سياحوں کے داخلے پر پابندی برقرار ہے۔

گلیات ڈیولپمنٹ اتھارٹی

گلیات ڈیولپمنٹ اتھارٹی (جی ڈی اے) کے ترجمان کے مطابق گلیات میں مرکزی شاہراہ سے برف ہٹانے کا آپریشن جاری ہے۔

جی ڈی اے کے ترجمان نے بتایا کہ برف ہٹانے کا آپریشن رات بھر جاری رہا، جس کے دوران ایبٹ آباد سے نتھیا گلی اور نتھیا گلی سے باڑیاں تک شاہراہ سے برف ہٹا دی گئی۔

ترجمان جی ڈی اے نے مزید بتایا کہ مرکزی شاہراہ پر نمک کے چھڑکاؤ کے بعد سیاحوں کو روانہ کر دیا جائے گا۔

گلیات ڈیولپمنٹ اتھارٹی (جی ڈی اے) کے ترجمان کا یہ بھی کہنا ہے کہ سیاحوں کا گلیات میں داخلہ تا حکمِ ثانی بند رہے گا۔

این ڈی ایم اے

نیشنل ڈیزاسٹرمینجمنٹ ( این ڈی ایم اے) کا کہنا ہے کہ مری ميں 90 فيصد سڑکوں کو کھول ديا گيا، سڑک کنارے صرف خالی گاڑياں کھڑی ہيں، 371افراد کو آرمی ريليف کيمپوں ميں منتقل کيا گيا، تمام سياحوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کيا جا چکا ہے، پاک افواج، سول ادارے سب نے مل کر ريسکيو کا کام کيا۔

چيئرمين اين ڈی ايم اے کے مطابق سياحوں کی منتقلی میں مقامی افراد نے بھی مدد کی، رات سے قبل ہی محفوظ مقامات پر منتقلی مکمل ہوئی۔

نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹرویز پولیس

نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹرویز پولیس کے انسپکٹر جنرل انعام غنی نے ایک پیغام میں خبردار کیا کہ برفباری کے دوران گاڑیوں کے معاملے میں خصوصی احتیاط برتی جائے۔

ان کے مطابق برف میں گاڑی کا سائلنسر دھنس جائے تو گاڑی میں زہریلی گیس کاربن مونو آکسائیڈ پھیل سکتی ہے، جس کی کوئی بو نہی ہوتی، مری میں اموات کا سبب یہی گیس بنی ہے۔

 امریکی یونیورسٹی آف میری لینڈ

اس سے قبل امریکی یونیورسٹی آف میری لینڈ میں وبائی امراض کے شعبے کے سربراہ فہیم یونس ایم ڈی بھی کاربن مونو آکسائیڈ کے خطرناک ہونے کی نشاندہی کر چکے تھے۔

اپنے ٹوئٹر پیغام میں مرے کے حادثے پر شدید صدمے کا اظہار کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’جاننا ضروری ہے کہ اموات سردی کی وجہ سے ہوئیں یا کاربن مونو آکسائڈ کی وجہ سے؟‘ ’جب برف میں کار کا سائلنسر دب جائے تو یہ زہریلی گیس کار میں پھیل سکتی ہے، اس کی کوئی بو نہیں ہوتی‘ اپنے پیغام میں انہوں نے توقع ظاہر کی کہ ’شاید تحقیقات سے آئندہ جانیں بچ جائیں۔‘

شہباز گل

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی عمل شہباز گل کا کہنا ہے کہ مری کی تمام مین شاہراہوں کو ٹریفک کيلئے کلیئر کردیا گیا ہے، مری سے رات گئے 600 سے 700 گاڑیوں کو نکالا گیا، راولپنڈی اسلام آباد سے مری آنے والے راستوں پر پولیس موجود ہے، تمام راستے آج بھی بند رہیں گے۔

Tabool ads will show in this div