يوم حق خوداراديت:مزید3کشمیریوں نےجام شہادت نوش کرلیا

اقوام متحدہ 5جنوری1949سےمعصوم مسلمانوں کوحق دلوانےسےقاصر
Jan 05, 2022

پانچ جنوری کو دنيا بھر ميں کشميری مسلمان حق خود اراديت کا دن منارہے ہيں تاہم اس روز بھی بھارتی فوجیوں نے مقبوضہ کشمیر میں کم از کم 3 نوجوانوں کو شہید کردیا۔

اقوام متحدہ کی قرارداد کو 73 برس گزرنے کے باوجود کشميريوں کو فيصلے کا حق نہيں مل سکا۔ کشميری بھائی بہن اپنے خون سے آزادی کے ديپ جلار ہے ہیں اور ان کا یہ عزم ہر روز پہلے سے بھی زیادہ پختہ ہو جاتا ہے کہ وہ بھارت کے خلاف آزادی کی جدوجہد بھرپور طریقہ سے جاری رکھیں گے اور اس کے لیے کسی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔

ایسےموقع پر جب کشميری یوم حق خود اراديت منا رہے تھے ہندوستانی فوج نے اپنی جارحیت جاری رکھتے ہوئے پلوامہ میں مزید 3 نوجوانوں کی زندگی کے چراغ گل کردیے جبکہ گزشتہ روز بھی سری نگر اور کولگام میں 4 نوجوان شہید کردیے گئے تھے۔ ان شہادتوں پر بھی کشمیری عوام کی جانب سے شدید احتجاج کیا گیا۔

5جنوری 1949 کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل ميں قرارداد منظور ہوئی تھی جس ميں تسليم کيا گيا تھا کہ کشميری اپنے مستقبل کا فيصلہ کرنے کا پورا حق رکھتے لیکن اب تک معصوم کشمیریوں کو ان کا حق نہیں دیا گیا۔

اسی مناسبت سے ہرسال کشميری مسلمان دنيا بھرميں اپنے اس حق کے ليے 5 جنوری کو ريلياں نکالتے اور سیمینار و کانفرنس کا اہتمام کرتے ہیں۔

Tabool ads will show in this div