ملک طویل مدتی منصوبوں سے بنتے ہیں، وزيراعظم

پاکستان کا مستقبل بہت روشن ہے

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/01/Ptv-Pm-Imran-Speech-DI-Khan-Motoray-05-01-.mp4"][/video]

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ ماضی میں پیسہ چوری نہ ہوتا تو آج ملک میں سڑکوں کی حالت بہتر ہوتی ، ہمیں بڑے منصوبوں پر کام کرنا ہے، ملک طویل مدتی منصوبوں سے بنتے ہیں۔ اس موقع پر انہوں نے وزیر مواصلات مراد سعید کی کارکردگی کو بھی سراہا۔

اسلام آباد میں ہکلہ،ڈيرہ اسماعيل خان موٹروے کی افتتاحی تقريب سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ملک طویل مدتی منصوبوں سے بنتے ہيں، چين نے 30 سال کا پلان ترتيب ديا ہوا ہے، ملک میں پہلے بھی بڑی سڑکیں بن سکتی تھیں، اگر پیسہ چوری نہ ہوتا۔

وزیراعظم نے کہا کہ 25 ارب روپے سے زائد کی زمینوں پر سے این ایچ اے نے قبضہ ختم کرا کے واپس حاصل کیں اور تجاوزات ختم کرائے۔ زمین پر قبضے کرنے والے این ایچ اے میں بھی بیٹھے ہیں۔ کرپشن ختم کرنے سے این ایچ اے کا ریوینیو دگنا ہوگیا ہے۔ جب ادارے سے کرپشن نکالی جائے تو قوم کو فائدہ ہوتا ہے

انہوں نے کہا کہ طویل منصوبہ بندی نہ کرنے سے تھوڑے علاقے آگے بڑھ جاتے ہيں، مگر ایسا نہ ہوسکا، ہمیں بڑے منصوبوں پر کام کرنا ہے۔

وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ سارے ترقی پذیر ممالک کا یہ مسئلہ ہے کہ ایک دو علاقوں پر زیادہ منصوبے بنائے جاتے ہیں باقی ممالک پیچھے رہ جاتے ہیں، 1960 میں پاکستان کی طویل دورانیہ منصوبہ بندی تھی۔

اس موقع پر ہیلتھ کارڈز کا ذکر کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ مارچ تک پنجاب کے ہر خاندان کو ہیلتھ کارڈ فراہم کرینگے، ہرخاندان کے پاس 10لاکھ روپے کی ہيلتھ انشورنس ہوگی، ہيلتھ کارڈ سے ہيلتھ کا پورا سسٹم بن جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ڈسٹرکٹ اسپتال خالی پڑے ہيں،لوگ علاج سے محروم ہيں، سڑکیں نہ ہونے کے باعث دور دراز کے علاقوں ميں ڈاکٹرز ڈیوٹی کے لیے جاتے ہی نہيں۔

Tabool ads will show in this div