سال 2021 کا اختتام: مہنگائی 20 فیصد سے متجاوز

گزشتہ ہفتے چکن، گھی، دالیں اور چینی مہنگی ہوئیں

سال 2021 کے اختتام پر ہفتہ وار مہنگائی کی شرح 20 فیصد سے تجاوز کرگئی۔

وفاقی ادارہ شماریات سے جاری کردہ اعداد وشمار کے مطابق 30 دسمبر کو ختم ہونے والے آخری ہفتے میں مہنگائی کی شرح 20.05 فیصد ریکارڈ کی گئی جبکہ ماہانہ 18 ہزار روپے سے کم آمدنی والوں کیلئے مہنگائی کی شرح 22 فیصد تک پہنچ گئی۔

 گزشتہ ایک ہفتے کے دوران 22 اشیا مہنگی جبکہ 7  اشیا کے نرخوں میں کمی آئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق زندہ برائلر چکن 4.25 کی قیمت روپے مہنگی ہوکر 201 روپے کلو، ڈھائی کلو گھی کا ٹن 9 روپے مہنگا ہو کر 1014 روپے، انڈے تین روپے درجن مہنگے ہوکر 188 روپے، لہسن تقریباً دو روپے فی کلو مہنگی ہوکر 288 روپے اور چینی کی قیمت 60 پیسے مہنگی ہوکر 92 روپے 12 پیسے کلو تک پہنچ گئی۔

اس کے برعکس ایل پی جی سلینڈر کی قیمت 39 روپے کم ہوکر 2424 روپے جبکہ ٹماٹر کی قیمت 25 روپے فی کلو سستے ہوکر 80 سے 55 پر آگئی۔

اسکے علاوہ  20 کلو آٹے کا تھیلا 5 روپے سستا ہوکر 1168 روپے اور آلو ساڑھے تین روپے کلو سستے ہوکر 41.50 روپے فی کلو تک پہنچ گئے۔

مزید برآں گزشتہ ایک سال میں کوکنگ آئل 59 فیصد، گھی 56 فیصد، سرسوں کا تیل 53 فیصد، دال مسور 36 فیصڈ، بجلی 84 فیصد، ایل پی جی 68 فیصد، جوتے 50 فیصد، پیٹرول 35 فیصد سے زیادہ، ڈیزل 27 فیصد مہنگا ہوا جبکہ اسی دوران ٹماٹر، دال مونگ، پیاز، انڈے، آلو کی قیمتوں میں کمی آئی ہے۔

Tabool ads will show in this div