بلوچستان اراکین اسمبلی کو ریکوڈک منصوبے پر ان کیمرہ بریفنگ

موجودہ حکومت بند کمروں میں فیصلے پریقین نہیں رکھتی، ترجمان
[caption id="attachment_2421843" align="alignnone" width="800"]Balochistan Assembly فوٹو: آن لائن[/caption]

بلوچستان حکومت کی جانب سے ریکوڈک منصوبے پر صوبائی اسمبلی میں ان کیمرہ بریفنگ کا اہتمام کیا گیا۔

ترجمان بلوچستان حکومت کے مطابق ان کیمرہ بریفنگ کا مقصد عوامی نمائندوں کو قومی اہمیت کے حامل منصوبے پر اعتماد میں لینا تھا، بریفنگ میں 42 اراکین اسمبلی شریک ہوئے اور 9 گھنٹے سے زائد طویل سیشن میں اراکین نے پورے انہماک سے شرکت کی۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل آف پاکستان اور دیگر متعلقہ وفاقی اداروں کے حکام نے اراکین اسمبلی کو بریفنگ دی، ان کیمرہ بریفنگ کے ذریعے اراکین اسمبلی کو مشاورت اور رائے دینے کا پلیٹ فارم مہیا کیا گیا اور ریکوڈک پر متعلقہ عالمی اداروں کے فیصلوں اور ان پر عملدرآمد کی پیشرفت سے بھی اراکین کو آگاہ کیا گیا۔

ترجمان نے کہا ہے کہ بریفنگ کے بعد سوال و جواب کا سیشن بھی ہوا اور متعلقہ حکام کی جانب سے اراکین کے پوچھے گئے سوالات کے تفصیلی جواب دیئے گئے۔

بلوچستان حکومت کے ترجمان نے کہا ہے کہ اراکین اسمبلی کا مطالبہ اور خواہش تھی کہ ریکوڈک منصوبے پر ایوان کو اعتماد میں لیا جائے، جس کا پورا احترام کرتے ہوئے وزیراعلیٰ میر عبدالقدوس بزنجو کی ہدایت پر سیشن کا انعقاد کیا گیا، جسے اراکین اسمبلی کی جانب سے سراہتے ہوئے اہم پیشرفت قرار دیا گیا۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ موجودہ صوبائی حکومت بند کمروں میں فیصلے کرنے پر یقین نہیں رکھتی، ریکوڈک سمیت تمام اہم صوبائی امور پر مشاورت سے فیصلے ہوں گے اور فیصلوں میں اپوزیشن سمیت تمام جماعتوں اور اسٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لیا جائیگا، صوبائی حکومت صوبے کے حقوق و وسائل کے تحفظ کیلئے پوری طرح پُر عزم ہے۔

سیشن میں چیف سیکریٹری بلوچستان مطہر نیاز رانا، سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو، ایڈیشنل چیف سیکریٹری منصوبہ بندی و ترقیات، سیکریٹری خزانہ،  سیکریٹری قانون اور چیئرمین بی آر اے بھی موجود تھے۔

Tabool ads will show in this div