میڈیا،صحافیوں کونوازنےکامعاملہ، کیارپورٹ جلد منظرعام پرآرہی ہے؟ 

چوہدری فواد حسین کی سات سے آٹھ میں گفتگو 
Dec 22, 2021

وفاقی وزیراطلاعات چوہدری فواد حسین کا کہنا ہے کہ ن لیگ دور میں میڈیا کو جاری کیے گئے اشتہارات اور صحافیوں کو مبینہ طور پر نوازنے سے متعلق رپورٹ مکمل ہے بس صرف وزارت خارجہ سے صحافیوں کے فارن ٹرپ کی لسٹ کا انتظار ہے۔ 

سماء کے پروگرام سات سے آٹھ میں گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ جن صحافیوں کو حکومت کی جانب سے پلاٹس مل چکے ہیں ان کی رپورٹ مکمل ہے جبکہ میڈیا ہاؤسز کو جاری ہونے والے اشتہارات کی رپورٹ بھی مکمل ہے اور وزارت کے حکام کو 41 گھنٹے کا وقت دیا ہے۔

خیبرپختونخوا بلدیاتی الیکشن سے متعلق فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے ایک تفصیلی رپورٹ آئے گی کہ ٹکٹ کی تقسیم کس طرح ہوئی ہے کیوں کہ اگر ایک ہی پارٹی کے چار،چار لوگ ایک حلقے سے الیکشن لڑیں گے تو نتیجہ تو یہی نکلے گا۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ بلدیاتی الیکشن میں تحصیل کونسلز کے نتائج سے ولیج کونسلز کے نتائج مختلف ہیں جہاں اب بھی تحریک انصاف کی سیٹیں باقی جماعتوں سے زیادہ ہیں جو ثابت کرتا ہے تحریک انصاف آج بھی کے پی کی مقبول جماعت ہے۔

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ ن لیگ اور پیپلزپارٹی خیبرپختونخوا میں موجود ہی نہیں ہیں کیوں کہ یہ جماعتیں اب قومی سیاست نہیں کررہیں، بلاول بھٹو اور مریم نواز کو پتہ ہی نہیں کہ سندھ اور پنجاب سے باہر بھی کچھ کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن بہتر منصوبہ بندی سے جیتے  جاتے ہیں جہاں بہتر مینجمنٹ ہوئی وہاں ہم جیت گئے جہاں نہیں ہوئی وہاں ہار گئے تاہم نتائج سے یہ بات بھی ثابت ہوتا ہے کہ تحریک انصاف ملک کی واحد قومی جماعت ہے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ خیبرپختونخوا میں ہمارا مقابلہ جے یو آئی، پنجاب میں مسلم لیگ ن اور سندھ میں پیپلزپارٹی سے ہے باقی جماعتیں تو چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں پر مشتمل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بلدیاتی الیکشن سے متعلق وزیراعظم کو تاحال کوئی رپورٹ پیش نہیں کی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مجموعی طور پر ٹکٹس کی تقسیم کےلیے کوئی ایک فارمولا بنانا مشکل ہے کیوں کہ ہر حلقے کے زمینی حقائق مختلف ہوتے ہیں۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ عمران خان کے قد کا کوئی لیڈر اس وقت ملک میں موجود نہیں، سن 2023 میں تحریک انصاف کو پہلے سے زیادہ اکثریت ملے گی اور امید ہے کہ ہمیں دوبارہ اتحادیوں کی ضرورت بھی نہیں پڑے گی۔

انہوں نے کہا کہ وہ جے یو آئی کو میں خواتین کے لیے مخصوص سوچ رکھنے اور کم عمر لڑکیوں کی شادی کو جائز کہنے پر انتہا پسند سمجھتے ہیں۔ 

وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ وکی لیکس کے مطابق مولانا فضل الرحمان نے امریکا سے وزیراعظم بنانے کے بدلے پاکستان اور افغانستان میں امریکا کو درپیش مسائل حل کرنے میں مدد کی پیشکش کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ یہ وہ طبقہ ہے جسے پتہ ہے کہ عوام کی مدد سے حکومت میں آنا ناممکن ہے اس لیے یہ کبھی امریکا تو کبھی دوسری قوتوں سے مطالبہ کرتے رہتے ہیں۔

Tabool ads will show in this div