کراچی: شارٹ ٹرم کڈنيپنگ ميں ملوث گروہ گرفتار

ملزمان ميں کسٹم،پولیس اورعدالتی عملہ شامل ہے

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/12/Rangers-Pc-Khi-16-12.mp4"][/video]

کراچی ميں رينجرز اور اے وی سی سی کی مشترکہ کارروائی میں 26 نومبر کو حمزہ نامی شہری کی شارٹ ٹرم کڈنيپنگ ميں ملوث 8  رکنی گروہ کو گرفتارکرليا گيا۔ملزمان ميں کسٹم،پولیس اورعدالتی عملہ شامل ہے۔منصوبے کا ماسٹرمائنڈ مغوی کا خالو ہے۔

کراچی میں جمعرات کو رينجرز اور پوليس نے مشترکہ نيوز کانفرنس ميں مغوی حمزہ کو بھی پيش کيا۔ انھوں نے صحافیوں کو بتايا کہ اغواکاروں نے ان سے 2 کروڑ روپے تاوان مانگا تھا۔

ایس پی اے وی سی سی معروف عثمان نے بتایا کہ گرفتار کئے جانے والوں میں کسٹمز کے 2 کانسٹیبل،پولیس کے 2 اہلکار شامل ہیں۔ذیشان نامی ملزم پولیس ٹریننگ سینٹرمیں زیرتربیت تھا جبکہ ضلع وسطی کا ہیڈ کانسٹیبل بھی اس کارروائی میں ملوث تھا۔

سندھ رينجرز کے کرنل سکندر نے بتايا کہ ملزمان  کو جديد ٹيکنالوجی کی مدد سے واٹس ايپ کال کو ٹريس کرکے گرفتار کيا گيا۔

پولیس کے مطابق ملزمان اغوا برائے تاوان کے علاوہ گاڑيوں کی غيرقانونی خريدو فروخت سميت ديگر جرائم ميں بھی ملوث ہيں۔ پولیس نےاغواکاروں سے تاوان کی رقم کے ساتھ مغوی کی موٹرسائیکل، اغوامیں استعمال گاڑی اورموٹرسائیکل برآمد کرلی ہے۔ملزمان کی نشاندہی پر7 گاڑیاں بھی برآمد کرلی گئیں۔

واضح رہے کہ کراچی میں حمزہ کی شارٹ کڈنيپنگ 26نومبر کو ہوئی تھی۔اغواکاروں نے 35 لاکھ روپے لے کر 6گھنٹے بعد مغوی کو چھوڑ ديا تھا۔

Tabool ads will show in this div