آٹا، گھی، چینی، چاول، دالوں پر سبسڈی دینےکا فیصلہ مؤخر

ملک میں چینی کے بحران کا خدشہ

Utility Stores in Crises Isb Pkg 01-12

وفاقی حکومت نے پانچ بنیادی اشیاء آٹا، چینی، چاول، گھی اور دالوں پر سبسڈی دینے کا فیصلہ مؤخر کر دیا ہے۔

وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ 3سال میں 50ارب روپے ملنے پر بھی یوٹیلٹی اسٹورز کارپوریشن مالی بحران کاشکار ہے، حکومتی فنڈز کے باوجود یوٹیلٹی اسٹورز کارپوریشن کے مالی معاملات میں بہتری نہ آسکی۔

وزارت خزانہ کے مطابق غریب ترین طبقے کو اشیائے ضروریہ پر بروقت ٹارگٹڈ سبسڈی نہیں دی جا سکے گی۔

سماء کے حاصل کردہ دستاویز کے مطابق یوٹیلٹی اسٹورز انتظامیہ نے 4 ارب 80 کروڑ روپے کے بقایاجات مانگے اور مزید 10 ارب روپے کے فنڈز کا مطالبہ بھی کیا جبکہ حکومت نے آٹے، گھی، چینی، چاول اور دالوں پر ساڑھے 5 ارب کی مزید سبسڈی کا فیصلہ مؤخر کر دیا ہے اور کہا کہ یوٹیلٹی اسٹورز انتظامیہ پہلے سے جاری فنڈز استعمال کرے۔

ملک میں چینی کے بحران کا خدشہ

دوسری جانب پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن کے چیئرمین ذکا اشرف نے ملک میں دوبارہ چینی کے بحران کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

سماء کوخصوصی انٹرویو میں ذکا اشرف نے بتایا کہ بھارت کی چینی دبئی کے راستے پاکستان آرہی ہے۔ ذکا اشرف نے کہا کہ بیگ تبدیل کرکے پاکستانیوں کو ہائی سلفر چینی کھلائی جا رہی ہے اور اس حوالے سے  وزیراعظم سے تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

انھوں نے شوگر انڈسٹری ختم کرکے کاٹن انڈسٹری کے فروغ کی سوچ کو غلط قرار دے دیا اور کہا کہ شوکت عزیز بھی شوگر، سیمنٹ اور کھاد انڈسٹری کو ختم کرنے کا ایجنڈا لے کر آئے تھے۔ مسابقتی کمیشن کا سخت رویہ شوگر انڈسٹری کو لے ڈوبے گا۔

ذکا اشرف نے کہا کہ چینی کا بحران دوبارہ پیدا ہوسکتا ہے تاہم وزیراعظم چینی کا بحران ختم کرنے میں سنجیدہ ہیں اور وزیراعظم کے ماتحت افراد کارکردگی دکھائیں گے تو بحران ختم ہوگا۔

Utility Stores

Tabool ads will show in this div