کراچی میں گاڑی پر فائرنگ، وکیل قتل، مقدمہ درج

مقتول بچوں کو اسکول چھوڑنے جا رہا تھا
کراچی : گلشن اقبال کے علاقے میں جائے وقوعہ کا منظر
کراچی : گلشن اقبال کے علاقے میں جائے وقوعہ کا منظر
کراچی : گلشن اقبال کے علاقے میں جائے وقوعہ کا منظر

کراچی کے علاقے گلشن اقبال میں گاڑی پر فائرنگ سے وکیل جاں بحق ہوگیا۔

پولیس کے مطابق بدھ یکم دسمبر کو گھات لگائے ملزمان نے صبح کالے رنگ کی گاڑی پر فائرنگ کی۔ حملہ آوروں کی تعداد 2 تھی، جنہوں نے ہیلمٹ پہنی ہوئی تھی۔ قاتلوں نے مقتول پر 6 سے 7 سیدھے اور انتہائی قریب سے فائر کیے۔

واقعہ گلشن اقبال کے علاقے بلاک 13 میں پیش آیا۔ جس سے گاڑی میں موجود وکیل شدید زخمی ہوا۔ وکیل کو اسپتال منتقل کیا جا رہا تھا کہ وہ راستے میں دم توڑ گیا۔

پولیس کے مطابق مقتول کی شناخت 40 سالہ عرفان علی مہر کے نام سے کی گئی ہے۔ مقتول ہائی کورٹ کے وکیل اور سندھ بار کونسل کے جنرل سیکریٹری تھے۔

ابتدائی تحقیقات کے مطابق پولیس نے واقعے کو ٹارگٹ کلنگ قرار دیا تاہم دیگر پہلوؤں سے بھی واقعے کی تحقیقات کی جارہی ہے۔

ابتدائی تحقیقات کے مطابق مقتول بچوں کو اسکول چھوڑنے جا رہے تھے کہ موٹر سائیکل پر سوار ملزمان نے ان پر سیدھی فائرنگ کی۔ قتل سے قبل ملزمان نے مقتول سے کوئی لوٹ مار بھی نہیں کی۔ واقعہ اسکول کے قریب پیش آیا۔ واقعہ کی سی سی ٹی وی ویڈیو سامنے آگئی ہے۔

واقعہ کے خلاف سندھ بار کونسل کی جانب سے احتجاج اور عدالتوں کے بائیکاٹ کا اعلان کیا گیا ہے۔  کراچی بار کے سیکریٹری کا کہنا ہے کہ وکلا آج احتجاجاً عدالتوں میں پیش نہیں ہونگے۔

شاہراہ فیصل پولیس نے مقتول وکیل عرفان علی کے بھائی رضوان علی کی مدعیت میں بدھ کی رات نامعلوم موٹر سائیکل سواروں کیخلاف پاکستان پینل کوڈ کی دفعات 302، 34 اور انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعہ 7 کے تحت مقدمہ نمبر 1505/2021 درج کرلیا۔

SINDH BAR

Tabool ads will show in this div