ڈالر تاریخ کی بلند ترین سطح پر

قیمت 178.30 روپے ہوگئی
Nov 26, 2021

انٹربینک اور اوپن مارکیٹوں میں پاکستانی روپے کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قیمت میں اضافہ ہوگیا۔

جمعہ کو انٹر بینک مارکیٹ میں امریکی ڈالر 48 پیسے اضافے سے 175.46 روپے کو ہوگیا جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر 50 پیسے مہنگا ہوکر 178.30  روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا۔ ڈالر کی قیمت میں پچھلے 2 روز میں 1 روپے 50 پیسے کا اضافہ ہوچکا ہے۔

تجزیہ کار عدنان سمیع شیخ کے مطابق مہینے کے آخر میں درآمدات میں اضافہ ہوتا ہے، جس کے باعث ڈالر کی طلب میں اضافہ ہوگیا ہے، اس کے علاوہ رمبادلہ ذخائر میں ایک ہفتے کے دوران 69.1 کروڑ ڈالر کی کمی ہوگئی اور 19 نومبر کو اسٹیٹ بینک کے پاس موجود ذخائر 16.3 ارب ڈالر کی سطح پر پہنچ گئے، جس کے باعث پاکستانی روپے پر دباؤ بڑھ گیا ہے۔

عدنان سمیع شیخ کا کہنا ہے کہ پاکستان کو آئی ایم ایف کی شرائط بھی پوری کرنی ہیں اور قرض کی اگلی قسط جنوری یا فروری تک ملے گی، اگلی قسط کے اجراء تک ڈالر کی قیمت میں مسلسل اضافہ دیکھا جاسکتا ہے اس کے علاوہ سعودی عرب سے بھی 4.2 ارب ڈالر کا امدادی پیکیج ملنا ابھی باقی ہے، جس کے بعد پاکستانی روپے پر دباؤ میں کمی آسکتی ہے۔

کرنسی مارکیٹ سے منسلک افراد کا کہنا ہے کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ ملکی معاشی صورتحال بہت زیادہ اچھی نہیں ہے، تجارتی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ بڑھ رہا ہے اور زرمبادلہ کے ذخائر اور ترسیلات زر میں بھی کمی آرہی ہے، جس کا اثر پاکستانی روپے پر بھی پڑ رہا ہے۔

ماہرین کہتے ہیں کہ دوسری طرف اس صورتحال کا بینک اور کرنسی ڈیلرز بھی بھرپور فائدہ اٹھارہے ہیں اور کرنسی مارکیٹ میں سٹے بازی کے ذریعے ڈالر کی قدر میں اتار چڑھاؤ ہورہا ہے۔

IMF loan

Dollar rates

Tabool ads will show in this div