کراچی کی کچرا کنڈی سے نومولود برآمد

بچہ فوری طبی امداد کیلئے اسپتال منتقل
فائل فوٹو
فائل فوٹو
[caption id="attachment_2445683" align="alignnone" width="900"] فائل فوٹو[/caption]

ریسکیو اداروں نے کراچی کی کچرا کنڈی سے نومولود بچہ برآمد کیا ہے، جس کے جسم کا 30 فیصد حصہ جلنے کی وجہ سے جھلسا ہوا ہے۔

امدادی ٹیموں کے مطابق واقعہ 26 نومبر بروز جمعہ کو پیش آیا۔ بچے کو گلشن حدید کی کچرا کنڈی سے برآمد کیا گیا۔

بچے کو فوری طبی امداد کیلئے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ ( این آئی سی ایچ) منتقل کردیا گیا ہے، جہاں ڈاکٹروں کی ٹیم بچے کا معائنہ اور طبی امداد فراہم کر رہی ہے۔

اسپتال انتظامیہ کے مطابق نومولود بچہ پیدائشی طور پر ایتھوسائسز یعنی جلد کی بیماری میں بھی مبتلا ہے۔ ڈاکٹرز کے مطابق بچے کی جان بچانے کی کوششیں جاری ہیں۔

بچہ 30 فیصد سے زائد جھلسا ہوا بھی ہے۔ ڈاکٹرز کا مزید کہنا ہے کہ بچے کی حالت تشویشناک ہے اور بچنا مشکل ہے۔ پولیس کے مطابق  نومولود کچرے ميں پڑا تھا کہ کسی نے آگ لگا دی۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ مختلف شہروں میں کچرا کنڈیوں یا سنسناں علاقوں سے اکثر نومولود بچوں کی لاشیں یا انہیں زندہ حالت میں ریسکیو کیا جاتا ہے۔

سال 2018 میں کراچی کے علاقے توحید کمرشل اسٹریٹ نمبر 26 کی کچرا کنڈی سے نومولود بچے کی ذبح شدہ لاش برآمد کی گئی تھی۔ بچہ ایک دن کا تھا، جسے تیز دھار آلے سے قتل کیا گیا تھا۔

ستمبر سال 2018 میں کراچی ہی کے علاقے گارڈن جیلانی مسجد کے قریب کچرا کنڈی سے صبح سویرے نومولود بچے کی کپڑے میں لپٹی لاش ملی تھی، جسے ایدھی کے رضا کاروں نے ایدھی ہوم منتقل کیا تھا۔

NEW BORN

Tabool ads will show in this div