ق لیگ پارليمانی ارکان کی اکثريت حکومت کاساتھ دینےکی حامی

حتمی فيصلے کا اختيار اسپيکر پنجاب اسمبلی چودھری پرويزالہی کودے ديا

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/11/Naeem-Ashraf-Butt-4.mp4"][/video]

مسلم ليگ ق کی پارليمانی پارٹی کی اکثريت نے حکومت کےساتھ چلنےکی حمايت کردی ہے۔

سماء کی نمائندہ خصوصی نعیم اشرف بٹ نے بتایا ہے کہ پارليمانی پارٹی اجلاس ميں جب چودھری پرويزالہی نے ارکان سے حکومت کےساتھ رہنے يا نہ رہنے کے لیےرائے مانگی تووفاقی وزير طارق بشير چيمہ نےدلائل ديے کہ حکومت عوامی مسائل حل نہيں کررہی ہے،اس ليے اب ہميں ان کے ساتھ مزيد نہيں چلنا چاہيے۔

تاہم مونس الہی حکومت کومزيد وقت دينے کے حامی ہيں۔ انھوں نے کہا کہ جلد بازی ميں فيصلہ نقصان دہ ہوگا۔اس کے بعد پارٹی کی اکثريت نے مونس الہی کی سوچ کی حمايت کی تاہم کچھ ارکان طارق بشير چيمہ کے بھي ساتھ  تھے۔

دومختلف آراء کے بعد حتمی فيصلے کا اختيار اسپيکر پنجاب اسمبلی چودھری پرويزالہی کودے ديا گيا۔

PML Q