ایلون مسک نے ٹیسلا کے5ارب ڈالر کےشیئر کیوں بیچ دیے؟

عالمی خبروں پر ایک نظر
Nov 11, 2021

 

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/11/Ma-World-Chunk-On-11th-Nov-Pkg-11-11-Ar.mp4"][/video]

اليکٹرک کار ساز کمپنی کے چيف ايگزيکٹو ايلون مسک نے کمپنی کے 5 ارب ڈالر کے حصص فروخت کرديے۔

کمپنی نے یہ اقدام دنيا سے بھوک کے خاتمے کے مشن کے سلسلے میں کیا۔ ٹویٹر پر سروے ميں 59 اعشاریہ 9 فيصد فالوورز نے  ٹيسلا کے 10 فيصد شيئرز فروخت کرنے کی حمايت کی تھی۔

گزشتہ دنوں اقوام متحدہ نے کہا تھا کہ ايلن مسک کی آمدنی کا صرف 2 فيصد دنيا ميں بھوک کے خاتمے کے لیے کافی ہے۔

امريکی سيکيورٹی اينڈ ايکسچينج کميشن کا کہنا ہے دنيا کے اميرترين شخص نے اپنی کمپنی کے 9 لاکھ 30 ہزار شيئرز فروخت کرديے ہیں۔

ادھر امريکا کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ فائلوں کی حوالگي کے خلاف مقدمہ ہار گئے۔ امريکی وفاقی عدالت نے کيپيٹل ہل پر حملے کی کارروائی سے متعلق دستاويزات کی فائلوں کی حوالگی کی منظوری دے دی۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے حملے سے متعلق فائلز دينے سے انکار کيا تھا ليکن اب عدالتی فيصلے کے بعد ٹرمپ کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی راہ بھی ہموار ہوسکتي ہے۔

صدارتی اليکشن ميں شکست پر ٹرمپ کے حاميوں نے جنوری ميں کيپيٹل ہل پر دھاوا بول ديا تھا اور ہنگامہ آرائی ميں 4 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

دریں اثناء بيلاروس اور پولينڈ کی سرحد پر مہاجرين کا معاملہ سنگين ہونے لگا جبکہ يورپی يونین کی جانب سے بيلاروس کو مزيد پابنديوں کا سامنا ہے۔

روسی جنگی طيارے بيلاروس کی فضائی حدود پر پروازيں کر رہے ہيں۔  پولش وزيراعظم کا کہنا ہے کہ بيلاروسی صدر پيوٹن کي کٹھ پتلی بنے ہوئے ہیں۔

Musk sells TESLA’s shares

Tabool ads will show in this div