وزیراعظم وفاقی وزراء کوبلوچستان میں مداخلت سے بازرکھیں، جام کمال

وزیراعلیٰ بلوچستان نے خود اپوزیشن میں بیٹھنے کا عندیہ دیدیا

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے وزیراعظم عمران خان کو اپنے بعض وفاقی وزراء کو بلوچستان میں مداخلت سے باز رکھنے کا مشورہ دیدیا۔ کہتے ہیں کہ اگر اپوزیشن نے ناراض ارکان کے ساتھ مل کر حکومت بنائی تو وہ حزب اختلاف میں بیٹھیں گے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے ٹویٹر پر وزیراعظم عمران خان کو مشورہ دیا ہے کہ پی ٹی آئی کے بعض وفاقی وزراء کو بلوچستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت سے روک کر صوبائی قیادت کو ذمہ دارانہ کردار ادا کرنے کی اجازت دیں۔

انہوں نے کہا کہ صوبائی ترقی متاثر ہوئی تو ذمہ دار پی ڈی ایم، پی ٹی آئی، چند مافیا اور ناراض ارکان ہوں گے، 2 ماہ ميں کئی چيزيں واضح اور چہرے عياں ہوگئے، بااصول اچھی ساکھ والے افراد لالچی، طاقت کے بھوکے اور سازشی نکلے۔

جام کمال خان نے صوفی بزرگ ابن العربی کی پوسٹ شیئر کی جس پر لکھا تھا کہ ’’ہوسکتا ہے منافقت بازی لے جائے لیکن آخرت سچے لوگوں کی ہے‘‘۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نے کہا کہ اپنا اختیار بی اے پی اور اتحادیوں کو دیدیا، ناراض ارکان اور اپوزیشن حکومت بناتے ہیں تو ہم اپوزیشن میں بیٹھیں گے۔

دوسری جانب سابق وزیراعلیٰ نواب ثناء اللہ زہری ناراض اور اپوزیشن ارکان کے کیمپ میں شامل ہوگئے۔

بی اے پی لائرز فورم نے قائمقام صدر ظہور بلیدی پر اعتماد کا اظہار کردیا۔

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کیخلاف عدم اعتماد کی قرارداد پر رائے شماری کل (25 اکتوبر) دن 11 بجے بلوچستان اسمبلی میں ہوگی۔

PM IMRAN KHAN

CM BALOCHISTAN JAM KAMAL KHAN

Tabool ads will show in this div