ہندوستان میں زیرتعلیم افغان طلباء کاتعلیمی مستقبل خطرے میں

طلباء کو سہولیات فراہم کرنا میزبان ممالک کی ذمہ داری ہے،طالبان

ہندوستان کے آئی سی سی آر اسکالرشپ پروگرام کے تحت بھارت میں زیر تعلیم افغان طلباء کو اس وقت بھارتی ویزوں کے حصول میں مشکلات کے باعث غیریقینی صورتحال کا سامنا ہے۔

افغان میڈیا کے مطابق ویزوں کے حصول میں مشکلات کا سامان کرنے والے طلباء میں اکثریت ان طلباء کی ہے جن کے نام سن 2020 اور سن 2021 کے اسکالرشپ پروگرامز کے لیے منتخت ہوئے تھے مگر پہلے سال کرونا اور اس کے بعد افغانستان کی موجودہ صورتحال کے باعث تا حال انہیں بھارتی ویزہ نہیں مل سکا۔

ایک طالب علم جمشید کا کہنا ہے کہ انہوں نے سن 2020 میں آئی سی سی آر کی اسکا لرشپ حاصل کی لیکن کوویڈ 19 کے مسائل کی وجہ سے وہ ذاتی طور پر اپنے اسباق جاری رکھنے سے قاصر تھے تاہم بجلی اور انٹرنیٹ کے مسائل کے باوجود انہوں نے دو سمسٹر مکمل کیے۔

رپورٹ کے مطابق بھارت میں پہلے سے زیرتعلیم طلباء جو اپنے اہلخانہ سے ملنے ملک گئے تھے وہ بھی افغانستان میں پھنس گئے ہے اور ان کی واپسی بھی فی الوقت مشکل لگ رہا ہے۔

ایک پی ایچ ڈی اسٹوڈنٹ منصور ناصری کا کہنا ہے کہ بھارتی حکومت نے ان کا سابقہ ویزہ قبول کرنے سے انکار کردیا ہے اور اب بدقسمتی سے ان کے تعلیمی مستقبل کی صورتحال کچھ واضح نہیں ہے۔

وزارت ہائر ایجوکیشن افغانستان کے ترجمان احمد تقی کا کہنا ہے کہ انہوں نے طلباء کو بیرون ملک جانے سے نہیں روکا جبکہ طلباء کو مطلوبہ سہولیات فراہم کرنا میزبان ملک کی ذمہ داری ہے۔

واضح رہے کہ افغانستان میں اس وقت بھارت کا سفارتخانہ بند ہے اور فی الوقت افغانستان کے ساتھ ان کا کسی بھی سطح پر کوئی رابطہ نہیں ہے۔

india and afghanistan

Afghan students

Tabool ads will show in this div