احمد مسعود کےطالبان پرسنگین الزامات،لڑائی جاری رکھنےکاعزم

عالمی برادری طالبان حکومت کوتسلیم نہ کرے

طالبان مخالف مزاحمتی فرنٹ کے رہنما احمد مسعود نے امید ظاہر کی ہے کہ بین الاقوامی برادری طالبان کو تسلیم نہ کرنے کی پالیسی پر قائم  رہے گی۔

احمد مسعود کا ایک بیان میں کہنا تھا کہ ہم دنیا بھر کے ممالک کے اس موقف کا خیرمقدم کرتے ہیں جس میں طالبان حکومت کو تسلیم نہ کرنے اور افغانستان میں ایک جامع حکومت کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

بیان کے مطابق طالبان نے قندھار ، بلخ ، دایکندی ، اندراب اور پنج شیر صوبوں میں ایسی کارروائیاں کی ہیں جو جنگی جرائم ، نسل کشی اور انسانیت سوز جرائم کی واضح مثالیں ہیں۔

احمد مسعود کا کہنا ہے کہ وہ اس وقت تک لڑیں گے اور مزاحمت کریں گے جب تک کہ وہ اپنے لوگوں کے جائز مقاصد حاصل نہیں کر لیتے۔

خیال رہے کہ افغان طالبان جنگی جرائم اور انتقامی کارروائیوں سے متعلق تمام الزامات کی تردید کرچکے ہیں گزشتہ روز قطر میں افغانستان کے عبوری وزیرخارجہ امیر خان متقی کا کہنا تھا کہ پورے افغانستان میں سیکیورٹی صورتحال بہتر ہوئی ہے اور تشدد کے واقعات ماضی کے مقابلے میں بہت کم ہیں۔

طالبان کے ستمبر 2021 کے پہلے ہفتے میں پنج شیر پر قبضے کے بعد  احمد مسعود اور سابق افغان نائب صدر امر اللہ صالح کے بارے میں بعض ذرائع نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ تاجکستان فرار ہوگئے تھے تاہم ان خبروں کی تاحال کوئی تصدیق نہیں ہوسکی ہے۔

AFGHAN TALIBAN

Ahmad Massoud

Panjshir

Tabool ads will show in this div