شہبازشریف کی بریت کی خبردینے والے یوٹرن لےچکے،شہزاداکبر

مشیراحتساب کی سماء کے پروگرام سوال میں گفتگو
Oct 01, 2021

مشیراحتساب شہزاداکبر کا کہنا ہے کہ شہبازشریف کو منی لانڈرنگ کیس میں بری ہونے کی خبر دینے والے صحافی اور ادارے اپنے خبر سے یوٹرن لے چکے ہیں۔

سماء کے پروگرام سوال میں گفتگو کرتے ہوئے شہزاداکبر کا کہنا تھا کہ جب خبر پہلی بار شائع کی گئی تو کہا گیا کہ شہبازشریف اور شریف فیملی برطانوی عدالت سے منی لانڈرنگ کیس میں بری ہوگئے مگر حکومتی موقف کے بعد اب خبر میں شہبازشریف کے بجائے شہبازفیملی لکھ رہے ہیں۔

شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ کا بیانیہ ملزمان کا بیانیہ ہے اور جب بھی کسی ملزم سے اس کے کیس سے متعلق پوچھا جائے تو وہ یہی کہتا ہے کہ اس پر جھوٹے کیسز دائر ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سلیمان شہباز کے اکاؤنٹ سے متعلق خبر پر شہبازشریف نے پریس کانفرنس میں کہا کہ وہ بری ہو گئے ہیں لیکن پاکستان میں منی لانڈرنگ کیسز میں کہتے ہیں کہ ان کا سلیمان شہباز کے کاروبار سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

مشیراحتساب شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ شہبازشریف پہلے یہ واضح کریں کہ ان کا سلیمان شہباز کے اکاؤنٹس اور کاروبار سے تعلق ہے یا نہیں۔

انہوں نے کہا کہ مذکورہ دستاویزات دو صفحاتی آرڈر کے سوا کچھ نہیں ہے اور اگر حکومت پاکستان کی اس کیس میں مداخلت ہوتی تو ہمارے پاس رپورٹ لازمی ہوتی۔

شہزاداکبر کا کہنا تھا کہ اس آرڈر کے لیے جب ہم نے برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی سے رابطہ کیا تو انہوں نے کہا کہ کیس میں ہم نے عدالت میں کوئی رپورٹ نہیں دی بلکہ صرف ایک سادہ درخواست کے ذریعے عدالت کو بتایا کہ ہم اس کیس کو ہم واپس لے رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی کی طرف سے تحریری طور پر مانگا گیا تھا کہ ان اشخاص کے پاکستان میں کیسز سے متعلق بتایا جائے جس کا ہم نے جواب دیا تھا۔

شہزاداکبر کا کہنا تھا کہ شہبازشریف کے خلاف پاکستان میں چلنے والے منی لانڈرنگ کیس سے اس کا کوئی تعلق نہیں کیونکہ وہ ٹی ٹی ہی جعلی تھے اور برطانیہ سے آئے ہی نہیں تھے۔

money-laundering case

PTI vs PMLN

Tabool ads will show in this div