طالبان کا پنجشیرکے ضلع شتل پر قبضے کا دعویٰ

پنجشیر جنگجو"نور زئی"کی ہلاکت کی بھی اطلاعات

افغان طالبان نے دعویٰ کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے پنجشیر میں پیش قدمی کرتے ہوئے اہم ترین علاقے خاوک کوتل، آب خوندرہ اور دوآب پر قبضہ کرلیا ہے۔

طالبان ذرائع کے مطابق پنجشیر کی اہم چیک پوسٹیں بھی قبضے میں لے لی گئی ہیں، جب کہ بدخشان اور اندراب کی جانب سے افغان فوج پنجشیر روڈ تک پہنچ گئی ہے۔

مختلف ذرائع سے موصول اطلاعات کے مطابق پنجشیر کا جنگجو "نور زئی" بھی طالبان کے ساتھ جھڑپوں میں گلبہار کے علاقے میں مارا گیا ہے۔

پنجشیر میں طالبان مخالف قومی مزاحمتی فورس (این آر ایف) کے ترجمان فہیم دستی نے بتایا کہ گزشتہ شب امریکی فوج کے انخلا کے بعد طالبان نے وادی پر حملہ کیا تھا جسے پسپا کردیا گیا ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا ہے کہ گزشتہ شب 31 اگست بروز منگل کو ہونے والی جھڑپوں میں کم از کم 30 طالبان جنگجو مارے گئے اور 15 زخمی ہوئے۔ ان کا کہنا تھا کہ طالبان حملے میں 2 مزاحمتی اہلکار بھی زخمی ہوئے، جب کہ مزاحتمی فورسز نے فوجی سازو سامان بھی قبضے میں لیا ہے۔

افغان طالبان کا کہنا ہے کہ پنجشیر وادی میں عوامی اجتماع ان کے استقبال کیلئے موجود ہے۔

ذرائع کے مطابق طالبان نے پنجشیر پر پروان کے راستے بھی حملے شروع کردیئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق امارت اسلامیہ کے دستوں نے 2 اینٹی آر پی جی ٹینک، 8 ایم ایم آرٹلری ٹینک اور بھاری مقدار میں گولا بارود بھی قبضے میں لیا۔

دوسری جانب افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا ہے کہ پنج شیر میں طالبان کے جانی نقصان کی خبریں بے بنیاد ہیں۔

TALIBAN

Panjshir

AHMED SHAH MASSOUD

Tabool ads will show in this div