طالبان اپنےمخالفین کوڈھونڈتے پھر رہےہیں،اقوام متحدہ کا دعویٰ

کسی گھر پر حملہ نہیں ہو رہا، ذبیح اللہ
Aug 20, 2021

اقوام متحدہ کا دعویٰ ہے کہ طالبان اپنے مخالفين کو گھر گھر تلاش کر رہے ہیں تاکہ انہیں سزا دی جاسکے۔ علاوہ ازیں مختلف ممالک سے طالبان اور افغانستان کے حوالے سے مختلف رد عمل سامنے آئے ہیں۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ طالبان امريکی اور نيٹو افواج کے ساتھ کام کرنے والوں کو تلاش کر رہے ہيں اور مخالفين کے اہل خانہ پر تشدد کی بھی خبریں آئی ہیں۔ دوسری جانب اقوام متحدہ طالبان سے مذاکرات پر تيار بھی نظر آتا ہے اور اس کے جنرل سیکریٹری انتيونيو گوئترس نے اس حوالے سے طالبان سے جلد رابطوں کا اشارہ بھی دیا ہے۔ عالمی ادارے کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے طالبان کے عسکری معاملات کے ترجمان ملا ذبيح اللہ نے الزامات مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی کے گھر پر حملہ نہيں کيا گیا لیکن اپنے رياستی اور مذہبی معاملات ميں کسی کی مداخلت برداشت نہيں کريں گے۔ مختلف ممالک کی جانب سے طالبان کے حوالے سے ملے جلے بیانات اور اقدامات دیکھنے میں آ رہے ہیں۔ چينی وزير خارجہ نے برطانوی ہم منصب سے گفتگو ميں کہا ہے کہ دنيا نے اگر طالبان کی مدد نہ کی تو معاملات اور خراب ہو جائيں گے۔ نيوزی لينڈ نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر افغانستان کے لیے 30 لاکھ ڈالر امداد کا اعلان کیا ہے۔ ترک وزير خارجہ کا کہنا ہے کہ افغانستان ميں حکومت بننتے ہی طالبان کو تسليم کرليا جائے گا۔ نيٹو نے کہا ہے کہ کابل سے 18 ہزار افراد کونکالا جاچکا ہے۔ ادارہ مہاجرين برائے اقوام متحدہ نے افغانستان کے پڑوسی ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ سرحدیں کھلی رکھیں۔ اس کا کہنا ہے کہ رياستوں کی قانونی اور اخلاقی ذمہ داری ہے کہ وہ افغانستان سے فرار ہونے والوں کو محفوظ راستہ فراہم کريں اور مہاجرين کو زبردستی واپس نہ کريں۔

UNITED NATION

AFGHAN TALIBAN

Tabool ads will show in this div