کرونا کی موجودہ قسم پہلےسے1200 گنا تیزی سےپھیلتی ہے،ڈاکٹرعطاالرحمان

کروناوائرس کی اقسام تبدیل ہوتی رہیں گی

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/08/naya-din-atta-ur-rehmann.mp4"][/video]

ڈاکٹرعطا الرحمان نے کہا ہے کہ جب تک دنیا کی 70 سے 80 فیصد آبادی کی ویکسینیشن نہیں ہوجاتی،کرونا وائرس کی اقسام تبدیل ہوتی رہیں گی اور اس میں دو سے تین سال بھی لگ سکتے ہیں۔

کرونا ٹاسک فورس کے سربراہ ڈاکٹرعطاالرحمان نے سماء کے پروگرام نیا دن میں بات کرتے ہوئے جمعہ کو بتایا کہ کرونا کے نئے کیسز کا پھیلاؤ خطرناک ہے۔ یہ صورتحال دنیا بھر میں دیکھی جارہی ہے اور امریکا میں بھی جمعرات کو کرونا کے 1 لاکھ نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ برطانیہ اور یورپ میں بھی کیسز سامنے آرہے ہیں۔

ڈاکٹر عطا الرحمان نے بتایا کہ پاکستان کے لیے بہت بڑا خطرہ ہے کیوں کہ ابھی صرف 10 فیصد آبادی کی ویکسینیشن ہوسکی ہے ۔اس میں تین سے سوا تین کروڑ افراد کو پہلی خوراک اور صرف ڈیڑھ کروڑ افراد کو دو خوراکیں دی جاسکی ہیں۔ویکسینیشن کی صورت میں شدید بیماری سے محفوظ ہوسکتے ہیں۔

ڈاکٹر عطاالرحمان نے مزید بتایا کہ کرونا کا موجودہ وائرس وہ نہیں ہے جو ابتدا میں چین سے پھیلنا شروع ہوا تھا۔ یہ اس سے 1200 گنا زیادہ تیزی سے پھیلتا ہے اور پھر چھا جاتا ہے۔ انھوں نے نویں اور دسویں محرم کو وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے محتاط ہونے کی ہدایت بھی کی۔

کرونا ٹاسک فورس کے سربراہ نے بتایا کہ کرونا کی نئی اقسام پچھلی اقسام کو دبا دیتے ہیں اور ہر ہفتے اور دو ہفتے میں اس کی اقسام تبدیل ہوجاتی ہیں۔

ویکسین سے متعلق انھوں نے بتایا کہ نئی ویکسین کی تیاری سے ہنگامی صورتحال میں بھی سال سے ڈیڑھ سال کا عرصہ لگتا ہے۔ جبکہ وائرس کی شکل بدلنے میں ہفتے اور دو ہفتے درکار ہوتے ہیں۔ ویکسین کے معاملے میں سال دو سال پیچھے رہیں گے تاہم ویکسین کی افادیت دیر پا ہوتی ہے تو یہ کافی حد تک وائرس پر قابو پانے میں مدد گار ثابت ہوتی ہیں۔

واضح رہے کہ این سی او سی کے سربراہ اسد عمر نے جمعرات کو ٹویٹ کرتے ہوئےبتایا کہ پاکستان میں 4 کروڑ ویکسینیشن خوراکیں لگائی جا چکی ہیں اور ویکسینیشن کا آخری کروڑ کا ہدف صرف 9 دن کی قلیل مدت میں حاصل ہوا۔

اس کےعلاوہ ویکسین کی تمام اقسام میں پہلی اور دوسری خوراک کا درمیانی وقفہ 42 دن سے کم کر کے 28 دن کردیا گیا۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹرنے جمعہ کو بتایا ہے کہ ایک دن میں مزید 79 افراد کرونا وائرس کے باعث انتقال کرگئے۔ ان میں سے 38مریضوں کا انتقال وینٹیلیٹر پر ہوا۔

ایک روزمیں 4 ہزار 619 نئے کرونا کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ کرونا کےمثبت کیسز کی شرح 7.76 فیصد ریکارڈ کی گئی۔

کرونا کے باعث سب سے زیادہ سندھ 39 میں، پنجاب میں 15 اموات ہوئیں۔خیبرپختونخوا میں 20، اسلام آباد میں 3، آزاد کشمیر میں 2 مریضوں کا انتقال ہوا۔کرونا سے مجموعی اموات کی تعداد 24 ہزار 266 ہو گئی ہے۔

این سی او سی نے مزید بتایا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 59 ہزار 504 ٹیسٹ کئے گئے۔ملک میں کرونا کےفعال کیسزکی تعداد86 ہزار236 ہوچکی ہے جبکہ کرونا سے صحت یاب ہونے والوں کی تعداد 9 لاکھ 79 ہزار411 ہوگئی ہے۔ملک بھر میں کرونا وائرس کے مجموعی کیسز کی تعداد 10 لاکھ 89 ہزار 913 ہوگئی ہے۔

این سی او سی کی جانب سے یہ بھی بتایا گیا کہ پانچ ہزار 95 مریض 639 اسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔اسلام آباد میں 43 فیصد، پشاور میں 37 فیصد، ملتان میں 43 فیصد بہاولپور میں 40 فیصد وینٹیلیٹرزبھرچکے ہیں۔

 اسلام آباد 43 فیصد، ایبٹ آباد 76 فیصد، کراچی 60 فیصد اور گوجرانوالہ 41 فیصد آکسیجن بیڈز پر مریض موجود ہیں۔

COVID NEWS

Tabool ads will show in this div