ٹوکیو اولمپکس:ارشد ندیم جیولن تھرو کےفائنل میں پہنچ گئے

پاکستان کو واحد میڈل ملنے کی امید برقرار
Aug 04, 2021
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2020/08/Arshad-Nadeem-Olympic-Tensports-04-08.mp4"][/video]

پاکستان سے تعلق رکھنے والے ایتھلیٹ ارشد ندیم ٹوکیو اولمپکس کے جیولن تھرو مقابلوں کے فائنل میں پہنچ گئے۔

ارشد ندیم نے آج (بدھ) کی صبح کوالیفائنگ مقابلوں میں 85.16 میٹر دور جیولن (نیزہ) پھینک کر گروپ بی میں پہلی پوزیشن حاصل کی جبکہ وہ فائنل میں جگہ بنانے والے 12 ایتھلیٹس میں مجموعی طور پر تیسرے نمبر پر رہے۔

ارشد ندیم اولمپکس کی تاریخ میں پہلے پاکستانی ایتھلیٹ ہیں جنھوں نے کسی ’انویٹیشن کوٹے‘ یا وائلڈ کارڈ کے بجائے اپنی کارکردگی کی بنیاد پر اولمپکس کے لیے براہ راست کوالیفائی کیا۔

ارشد ندیم کو پاکستان کےلیے ٹوکیو اولمپکس میں تمغہ حاصل کرنے کی آخری امید قرار دیا جارہا ہے۔

جیولن تھرو کے فائنل مقابلے 7 اگست سے کوگا۔ ارشد نے کوالیفائنگ راؤنڈ میں جس فاصلے تک نیزہ پھینکا یہ ان کے کریئر کی بہترین کارکردگی نہیں تھی اور وہ سنہ 2019 میں نیپال کے شہر کٹھمنڈو میں 86 اعشاریہ 29 میٹرز فاصلے تک نیزہ پھینک کر ساؤتھ ایشین گیمز کا نیا ریکارڈ قائم کرچکے ہیں۔

اسی کارکردگی کی بنیاد پر وہ براہ راست ٹوکیو اولمپکس کے لیے کوالیفائی کرنے میں بھی کامیاب ہوئے تھے۔

واضح رہے کہ ارشد ندیم کا تعلق میاں چنوں کے قریب واقع گاؤں چک نمبر 101-15 ایل سے ہے۔

دوسری جانب ارشد ندیم کے ٹوکیو اولمپکس میں کوالیفائی کرنے پر انکے علاقے خانیوال میں جشن کا سماں ہے۔

Arshad Nadeem

Tokyo Olympics

Tabool ads will show in this div