نورمقدم کےقتل میں ملوث ملزم کےجسمانی ریمانڈ میں توسیع

مدعی کی جانب سےشاہ خاور مجسٹریٹ کے سامنےپیش

اسلام آباد میں سابق سفارت کار شوکت مقدم کی بیٹی نور مقدم کے قتل میں ملوث ملزم ظاہر جعفر کے ریمانڈ میں 2 روز کی توسیع کردی گئی۔

سابق سفارت کار کی بیٹی کے قتل میں ملوث ملزم ظاہر جعفر ڈیوٹی مجسٹریٹ صہیب بلال رانجھا کی عدالت میں پیش کیا گیا، پولیس نے ملزم کو تین روزہ جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر عدالت پیش کیا۔ عدالت میں مدعی کی جانب سے شاہ خاور مجسٹریٹ کے سامنے پیش ہوئے۔

پولیس نے عدالت میں بیان ریکارڈ کراتے ہوئے کہا کہ ملزم ظاہر جعفر کے قبضے سے آلہ قتل کے دوران استعمال کیا گیا چاقو برآمد کرلیا ہے جبکہ ملزم کے قبضے سے پستول اور آہنی مکا بھی برآمد ہوا ہے۔

پولیس نے بیان دیتے ہوئے عدالت سے استدعا کی کہ ملزم سے موبائل فون تاحال برآمد نہیں کیا جاسکا ہے اس لیے مزید ریمانڈ دیا جائے۔ جس پر عدالت نے ملزم کے 2 روزہ جسمانی ریمانڈ کی توسیع دیتے ہوئے پولیس کو حکم دیا کہ ملزم کو منگل 27جولائی کو دوبارہ عدالت میں پیش کیا جائے۔

اسلام آباد میں سابق سفارت کار کی بیٹی قتل

اس سے قبل گزشتہ روز نور مقدم کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں اس بات کی تصدیق ہوئی تھی کہ مقتولہ کے جسم پر تشدد کے متعدد نشانات موجود ہیں۔ رپورٹ کے مطابق موت کی وجہ دماغ کو آکسیجن سپلائی کی بندش ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مقتولہ کا سر دھڑ سے الگ کیا گیا۔

مقتولہ کے جسم پر تشدد کے متعدد نشانات پائے گئے۔ پوسٹ مارٹم کیلئے مقتولہ کے معدے سے لیا گیا مواد فرانزک کیلئے لیبارٹری بھجوایا گیا ہے، جس کی رپورٹ تاحال پولیس کو موصول نہیں ہوئی ہے۔

نورمقدم کےقتل کی تحقیقات جاری،پولیس کےاہم انکشافات

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ مقتولہ کے گھٹنے کے نیچے کے حصے پر زخموں کے متعدد نشان ہیں۔ مقتولہ کے جسم پر متعدد مقامات پر چاقو کے گہرے زخم پائے گئے۔

واضح رہے کہ اسلام آباد کے علاقے ایف 7 فور میں سابق پاکستانی سفارت کار کی بیٹی کے قتل کی خبریں بدھ 21 جولائی کو میڈیا میں منظر عام پر آئیں، جب کہ پولیس کا کہنا ہے کہ نور مقدم کا قتل 20 جولائی کو ہوا۔

ابتدائی تحقیقات کے مطابق مقتولہ کو پہلے گولی مار کر قتل کیا گیا اور بعد ازاں اسے ذبح کیا گیا۔

نور مقدم کا قتل:ملزم کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی سفارش

گزشتہ روز22 جولائی بروز جمعرات ایس ایس پی انویسٹی گیشن اسلام آباد عطاء الرحمان نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا تھا کہ سابق سفارت کار کی بیٹی کا قتل انتہائی سفاکانہ عمل ہے۔ پولیس کی پوری کوشش ہے کہ شواہد ضائع نہ ہوں۔

واضح رہے کہ آئی جی اسلام آباد نے ملزم ظاہر ذاکر کا نام اے سی ایل میں شامل کرنے کی درخواست کردی ہے۔

Noor Muqaddam Murder Case

Tabool ads will show in this div