لاہور: تحریک لبیک مظاہرین کیخلاف آپریشن، اہم شاہراہیں کھل گئیں

اسکیم موڑ، بیٹری اسٹاپ ملتان ورڈ پر احتجاج جاری
فوٹو: آن لائن
فوٹو: آن لائن
Lhr TLP protest 2 فوٹو: آن لائن

لاہور میں تحریک لبیک کے مظاہرین کے خلاف پولیس اور رینجرز نے مشترکہ آپریشن کے بعد شہر کی اہم شاہراہیں کھل گئیں۔

چونگی امرسدھو، بابو صابو، داروغہ والہ، بھٹہ چوک، مغلوپورہ، ایل ڈی اے چوک اور شاہدری چوک کو احتجاجی مظاہرین سے خالی کرا لیا گیا۔

شہر میں صرف اسکیم موڑ اور بیٹری اسٹاپ ملتان روڈ پر احتجاج جاری ہے۔ کارروائی ميں درجنوں مظاہرین کو گرفتار کر لیا گیا۔

پیر 12اپریل سے شروع ہونے والے مظاہروں کے باعث 2 پولیس اہلکار جاں بحق جبکہ 200 سے زائد زخمی ہوئے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے انسداد دہشتگردی ایکٹ کے تحت تحریک لبیک پاکستان پر پابندی لگانے کا فیصلہ کی تھا۔

وزیراعظم نے تحریک لبیک پاکستان پرپابندی کی سمری منظور کرلی

ٹی ایل پی پر پابندی لگانے کی وزارت داخلہ کی سمری وزیراعظم کو بھیجی گئی جسے منظور کرلیا گیا۔

تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ سعد حسین رضوی کو پیر کے روز حفظ ماتقدم کے تحت حراست میں لیا گیا تھا، جس کے بعد کراچی اور لاہور سمیت ملک کے مختلف شہروں میں ٹی ایل پی کے کارکنوں نے احتجاج شروع کر دیا جبکہ کئی مقامات پر احتجاج پرتشدد رنگ اختیار کرگیا تھا۔

سمری میں بتایا گیا تھا کہ ٹی ایل پی کارکنوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی 30 گاڑیوں کو نقصان پہنچایا، پر تشدد کارروائیوں سے 2 پولیس اہلکار جاں بحق اور 580 زخمی ہوئے جبکہ تحریک لبیک پاکستان کے 2 ہزار 63 کارکنوں کو گرفتار کر کے انکے خلاف 115 ایف آئی آرز درج کی جاچکی ہیں۔

محکمہ داخلہ سندھ نے بھی ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے ٹی ایل پی کارکنوں کیخلاف کریک ڈاؤن کا اعلان کیا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ نقص امن کے خطرے کے پیش نظر تحریک لبیک پاکستان کے کارکنوں کو 30 روز کیلئے حراست میں لیا جارہا ہے۔

TLP

Tabool ads will show in this div