فوج کوبراہراست سیاسی معاملات میں مداخلت کاحق نہیں،جماعت اسلامی

Nov 30, -0001

ویب ڈیسک:
لاہور : جماعت اسلامی کے سینیر رہنما لیاقت بلوچ کا کہنا ہے کہ فوج ایک عسکری ادارہ ہے، جسے براہ راست ریاستی اور سیاسی معاملات میں مداخلت کا حق نہیں، انہوں نے کہا کہ خاص مقاصد کیلئے ضمنی بحثوں میں الجھایا جا رہا ہے۔

منور حسن کے متنازعہ بیان پر جماعت اسلامی کا مشاورتی اجلاس آج ہیڈکواٹرز منصورہ لاہور میں ہوا۔ اجلاس میں جماعت اسلامی کی سینیر قیادت نے آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری کردہ غیر معمولی بیان پر غور کیا گیا۔ اجلاس میں متفقہ طور اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ خاص مقاصد کیلئے ملک و قوم کو ضمنی بحثوں میں الجھایا جارہا ہے۔

اجلاس کے بعد منصورہ کے باہر میڈیا سے گفت گو میں لیاقت بلوچ کا کہنا تھا کہ فوج کو براہ راست سیاسی اور جمہوری معاملات میں مداخلت کو کوئی اختیار نہیں، آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز ایک سیاسی پریس ریلیز ہے۔

انہوں نے کہا کہ جماعت نے اسلامی نے ہمیشہ پاک فوج کے شہداء کو خراج عقیدت پیش کیا، ہماری جماعت نے اپر دیر اور سلالہ واقعات کی مذمت کی، جماعت اسلامی قومی کیلئے ہر قسم کی قربانی دینے کو تیار ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سیاست میں فوج کا حق تسلیم نہیں کیا جاسکتا، اس وقت یہ فیصلہ کرنا ہے کہ ڈرون حملے بند کیے جائیں اور نیٹو سپلائی روکی جائے، تاہم ملک و عوام کو ضمنی بحث میں الجھایا جا رہا ہے جس کا مقصد خاص اہداف حاصل کر نا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں امریکی جنگ سے نکلنے کیلئے متحدہ ہونے کی ضرورت ہے، جس کیلئے امریکی غلامی سے نجات اور قومی سلامتی کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے۔ صحافیوں کی جانب سے معافی مانگنے کے سوالات پر لیاقت بلوچ نے تبصرے سے انکار کردیا۔ مختصر پریس کانفرنس کے بعد لیاقت بلوچ میڈیا کے جوابات دیئے بغیر چلے گئے۔ سماء

میں

Pakistani

registered

ford

Tabool ads will show in this div