نابالغ بچیوں کی شادی اسلام میں جائز نہیں،طاہراشرفی

لوگ خواتین اوراپنی بہنوں کووراثت میں حصہ نہیں دیتے

TAHIR SHRAFI, FAWAD CHAUDHRY, EID UL AZHA

مولانا طاہر اشرفی نے کہا ہے کہ نابالغ بچیوں کی شادی اسلام میں جائز ہی نہیں ہےاورلوگ خواتین اوراپنی بہنوں کووراثت میں حصہ نہیں دیتے۔انھوں نےیقین دلایا کہ مدرسے کے بنک اکاؤنٹس اور رجسٹریشن کا معاملہ جلد حل کر لیا جائے گاجبکہ مدارس کووزارت تعلیم میں رجسٹرڈ کیا جا رہا ہے۔

جمعہ کو راولپنڈی میں میڈیا ٹاک کرتےہوئے معاون خصوصی برائے بین المذاہبی امورطاہراشرفی نےبتایا کہ جب جنرل ضیاء الحق نےمارشل لا لگایا تو اجلاس بلایا گیا اورتب کہا گیا کہ علما اکرام سن لیں کہ اب کوئی جلسےجلوس مجالس نہیں ہوگی لیکن علما نے کہا کہ کل ہی راول پنڈی کے راجہ بازارسےجلوس نکلے گا۔

طاہر اشرفی نےکہا کہ پاکستان میں ختم نبوت کو کوئی چیلنج نہیں کرسکتا۔ختم نبوت کےمعاملے پر پاکستانیوں نے لوگوں نے گولیاں کھائی اورآج ختم نبوت کا معاملہ ہے تو حکمت اور جرات کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔

عورت مارچ سے متعلق انھوں نےکہا کہ کچھ روز قبل عورت مارچ منعقد کیا گیا تھا۔اس حوالےسےوفاقی وزیرداخلہ کوخط لکھا ہےکہ اگرعورت مارچ میں ختم نبوت کی توہین ہوئی ہےتومقدمہ درج کیا جائے۔

مذہبی تعلیمی اداروں سےمتعلق انھوں نے کہا کہ مدارس کو آج کل بڑا خطرہ کہا جا رہا ہے۔کسی کی جرات نہیں کہ مدارس بندکرسکیں۔علما کرام کسی کے کام کی نفی نہیں کرتےاورہرکوئی اپنے دائرہ کارمیں رہ کرکام کرے۔

انھوں نےکہا کہ آرمی چیف قمر جاوید باجوہ نے ایک ملاقات میں کہا تھا کہ ہماری خواہش ہے کہ ایک دن مدرسے کا بچہ آرمی چیف بنے۔مدرسے کی دینی تعلیم میں تبدیلی یا قبضے کا کوئی بھی نہ سوچے۔

Tahir Ashrafi

Tabool ads will show in this div