تجوری ٹاورکیس، سپریم کورٹ کے احکامات پرعملدرآمد کی یقین دہانی

منتظم تجوری ٹاور کا کہنا ہےکہ اب تک کسی نےرابطہ نہیں کیا
[caption id="attachment_2141829" align="alignnone" width="800"]Tejori-heights فوٹو: اسٹار مارکیٹنگ پرائیویٹ لمیٹڈ[/caption]

سپریم کورٹ کے حکم کے باوجود اب تک انتظامیہ کی جانب سے تجوری ٹاور کے منتظمین سے رابطہ نہیں کیا۔ منتظم تجوری ٹاورز نے یقین دہانی کرائی ہے کہ سپریم کورٹ کے احکامات پر عملدرآمد کیا جائے گا۔

منتظم تجوری ٹاور کا کہنا ہےکہ اب تک کسی نےرابطہ نہیں کیا،ہم خود انتظامیہ کے منتظر ہیں، رات کو2 پولیس اہلکار آئے تھے واپس چلے گئے۔ منتظمین کا کہنا ہے کہ ہمارا عملہ سرکاری ٹیم سے تعاون کرے گا، دفتر کھلا ہے،کوئی بھی آسکتا ہے۔

عدالت کا تجوری ٹاور کو سرکاری تحویل میں لینے کا حکم گزشتہ روز دیا تھا۔

منگل کو سپریم کورٹ کراچی کی رجسٹری میں29 دسمبر کو ریلوے زمین پر تجوری ٹاور کی تعمیر کے معاملے پر سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے سماعت کی۔

عدالت نے گزشتہ روز کمشنر کراچی کو پروجیکٹ ٹیک اوور کرنے کا حکم دیا اور ریمارکس دیے کہ تا حکم ثانی کسی قسم کی مداخلت نہ کی جائے۔

کے سی آر کی زمین پر قبضہ کرکے غیرقانونی تعمیرات کی جا رہی ہیں اور سندھ ہائی کورٹ کی رپورٹ موجود ہے زمین پر قبضہ ہوا ہے۔ وکیل تجوری ٹاور رضا ربانی نے عدالت کو بتایا کہ ہم اس رپورٹ پر اعتراض جمع کرا چکے ہیں۔

چیف جسٹس نے استفار کیا کہ آپ نے بلڈنگ بنا دی اب اسٹئشن کہاں بنے گا؟ بادی النظر میں کاغذات اور ریکارڈ میں غیر قانونی تعمیر کی گئی۔ ریلوے زمین پر کوئی تعمیرات برداشت نہیں کریں گے۔

دوران سماعت چیف جسٹس کا سیکریٹری ریلوے سے مکالمہ ہوا۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ اتنی قیمتی زمین آپ نے اونے پونے بیچ دی۔ آپ لوگوں کو ریلوے کے لیے کچھ بنانا ہے تو بنائیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ریلوے کی زمینوں پر تو آپ کے ہی لوگوں نے قبضہ کیا ہوا ہے ناں اور وہاں تو اسلحہ بردار لوگ بیٹھے ہیں آپ جائیں تو پتا چل جائے گا۔ چیف جسٹس نے ہدایت کی کہ جائیں رینجرز کی مدد سے کارروائی کریں۔

Supreme Court Registry

Tabool ads will show in this div