پیپلزپارٹی کا پارلیمنٹ میں رہنے اور سینیٹ الیکشن لڑنے کااعلان

سینٹرل ایگزیکٹوکمیٹی نے پی ڈی ایم فیصلوں کی توثیق کردی،بلاول

پیپلزپارٹی نے اسمبلیوں میں رہ کر حکومت کا مقابلہ کرنے اور سینیٹ الیکشن میں حصہ لینے کا اعلان کردیا۔ بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی نے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے فیصلوں کی توثیق کردی، 31 جنوری تک اراکین اپنے استعفے پارٹی قائدین کو جمع کرادیں گے، عمران خان 31 دسمبر تک خود ہی چلے جائیں ورنہ ہم زبردستی بھیج دیں گے۔

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹر زرداری نے پی پی پی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے طویل اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے اعلان کیا کہ پیپلزپارٹی اسمبلیوں میں رہ کر حکومت کا مقابلہ کرے گی، اس حکومت کو پارلیمان میں چیلنج کریں گے، سینیٹ کا میدان خالی نہیں چھوڑیں گے۔ انہوں نے دیگر جماعتوں سے بھی مطالبہ کیا کہ تمام جماعتیں سینیٹ الیکشن میں مل کر  حکومت سے مقابلہ کریں۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کی ناکامی کا بوجھ عوام اٹھا رہے ہیں جو ناقابل برداشت ہے، عوام تاریخی غربت اور مہنگائی کا سامنا کررہے ہیں، 2018ء کے الیکشن سلیکشن تھے، سلیکٹڈ حکومت کی وجہ سے ملک تباہی کی طرف جارہا ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ سی ای سی نے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے فیصلوں کی توثیق کردی، 31 دسمبر تک تمام استعفے پارٹی قیادت کے پاس جمع ہوں گے، عمران خان 31 دسمبر تک خود ہی چلے جائیں، اگر نہیں گئے تو ہم زبردستی بھیج دیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس حکومت کو پارلیمان میں چیلنج کرنا چاہئے، صوبائی اسمبلیوں میں بھی حکومت کا مقابلہ کریں گے، تمام جماعتیں مل کر حکومت سے سینیٹ الیکشن میں مقابلہ کریں، حکومت کیخلاف کسانوں، لیڈی ہیلتھ ورکرز، ینگ ڈاکٹرز، طلبہ اور وکلاء سمیت دیگر شعبوں سے بھی رابطہ کریں گے۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے سینئر ن لیگی رہنماء خواجہ آصف کی نیب کے ہاتھوں گرفتاری کی مذمت کرتے ہوئے اسے سیاسی انتقام قرار دیا، ان کا کہنا تھا کہ یہ روایت پاکستان کی جمہوریت اور استحکام کیخلاف ہے۔

یہ بھی پڑھیں : نیب اسلام آباد نے خواجہ آصف کو گرفتار کرلیا

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کی تجاویز پی ڈی ایم میں رکھیں گے جس کے بعد حتمی فیصلہ ہوگا، پی ڈی ایم اور پاکستان پیپلزپارٹی کیخلاف میڈیا میں ہونیوالے پروپیگنڈے پر یقین نہ کیا جائے، حکومت کے خاتمے اور اسٹیبلشمنٹ کے سیاست میں عمل دخل کیخلاف پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ ایک پیج پر ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم نے بھی استعفوں کو استعمال کرنے کا حتمی فیصلہ نہیں کیا، ایک دن کیلئے اسٹیبلشمنٹ سیاست میں عمل دخل بند کردے یہ حکومت گر جائے گی، یہ کیسے ممکن ہے کہ ایم کیو ایم، جی ڈی اے اور دیگر جماعتیں شدید تحفظات کے باوجود حکومت کے ساتھ کھڑی ہیں، ان جماعتوں کو حکومت کا ساتھ دینے پر مجبور کیا جارہا ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جمہوریت میں ہر فورم کو اختیار کرنا چاہئے، اس حکومت پر ہر طرف سے حملہ کرے گی، سڑکوں، پارلیمان اور عدالت میں بھی جائیں گے، استعفیٰ ہمارا ایٹم بم ہے، سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی میں اس سے پیچھے ہٹنے کا کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔

IMRAN KHAN

bilawal bhutto zardari

Pakistan Democratic Movement

Tabool ads will show in this div