’اسرائیل سے تعلقات استوار کرنیوالا پانچواں ملک پاکستان نہیں‘

اسرائیلی وزیر کا انٹرویو میں واضح اعلان
Dec 23, 2020

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے دور اقتدار کے خاتمے سے قبل اسرائیل پانچویں مسلمان ملک سے تعلقات استوار کرنے کیلئے کوشاں ہے تاہم ایک اسرائیلی وزیر نے واضح کیا ہے کہ یہ پانچواں ملک پاکستان نہیں۔

امریکا کی کوششوں کے بعد اسرائیل کے 4 عرب ممالک متحدہ عرب امارات، بحرین، سوڈان اور مراکش سے تعلقات استوار ہوچکے ہیں جبکہ چند روز قبل مراکش نے اسرائیل امریکا وفد کی میزبانی بھی کی تھی۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ جنوری میں عہدہ صدارت چھوڑ دیں گے، وہ دوسری مرتبہ صدارتی انتخابات میں کامیابی حاصل نہیں کرسکے تھے، نومبر میں ہونیوالے انتخابات میں جو بائیڈن امریکی صدر منتخب ہوگئے۔

غیرملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیلی وزیر اوفر آکونس نے وائی نیٹ ٹی وی کو دیئے گئے انٹرویو میں ایک سوال کے کیا ڈونلڈ ٹرمپ کے عہدہ چھوڑنے سے قبل پانچواں اسلامی ملک تعلقات کی بحالی کے معاہدے پر دستخط کرسکتا ہے؟، پر کہا کہ ہم اس سمت میں کام کررہے ہیں۔

انہوں نے حتمی نام ظاہر نہ کرتے ہوئے کہا کہ دو ممالک اسرائیل کے ساتھ تعلقات کی بحالی کے امیدوار ہیں، وہ مسلمان ملک چھوٹا نہیں ہے، ایک خلیج اور دوسرا مشرق سے تعلق رکھتا ہے تاہم انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان اور سعودی عرب اس میں شامل نہیں۔

آکونس نے بتایا کہ اسرائیل کے ساتھ تعلقات بحال کرنے والے پانچویں ملک کا اعلان امریکا کی جانب سے کیا جائے گا، جو امن معاہدے کے تحت ہوگا۔

Tabool ads will show in this div