نیب کاعدنان خواجہ تقرری کیس میں سابق وزیراعظم گیلانی کےخلاف ریفرنس بنانے سےدوبارہ انکار

اسٹاف رپورٹ


اسلام آباد : نیب نے عدنان خواجہ تقرری کیس میں سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے خلاف ریفرنس بنانے سے ایک بار پھر انکار کر دیا۔ سپریم کورٹ کو باقاعدہ آگاہ کر دیا گیا،پراسیکیوٹر جنرل نیب کی طرف سے عدالت میں جمع کرائی گئی رپورٹ سماء کو موصول ہو گئی۔


پراسیکیوٹر جنرل نیب نے سابق وزیراعظم گیلانی کے خلاف ریفرنس نہ بنانے سے متعلق رپورٹ عدالت میں جمع کرا دی۔ رپورٹ کے ہمرا سابق چیئرمین نیب کے فیصلوں کی نقول بھی منسلک کی گئی ہیں۔


 رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سابق چیئرمین فصیح بخاری نے پندرہ فروری کو فیصلہ دیا تھا کہ سابق چیئرمین او جی ڈی سی ایل عدنان خواجہ کی تقرری میں یوسف رضا گیلانی کی بدنیتی شامل تھی نہ انہوں نے کوئی مالی فائدہ اٹھایا۔ سابق وزیراعظم سے کوئی ریکوری بھی مطلوب نہیں اس لئے ان کے خلاف ریفرنس نہیں بنتا۔


 فصیح بخاری نے فیصلے کی بنیاد پراسیکیوٹر جنرل نیب کی تیرہ فروری کی رپورٹ کو بنایا تھا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ متاثرہ افسر سابق سیکرٹری ایسٹیبلشمنٹ اسماعیل قریشی سابق چیئرمین نیب کے فیصلے کو ہائیکورٹ میں چیلنج کر کے تبدیل کرا سکتے تھے لیکن ایسا نہیں کیا گیا اس لئے چیئرمین نیب کا فیصلہ برقرار ہے۔ اس میں مداخلت کا کوئی جواز نہیں۔ نیب عدالت سے سزا یافتہ احمد ریاض شیخ کو بھی ترقی کیس میں ریفرنس سے استثنیٰ دیدیا گیا ہے۔


رپورٹ کے مطابق عدنان خواجہ کے خلاف بھی ریفرنس دائر نہیں ہو سکتا۔ این آر او عملدرآمد کیس میں سپریم کورٹ نے سوال اٹھایا تھا کہ عدنان خواجہ کی تقرری کا نوٹیفکیشن جاری کرنے والے افسر کے خلاف کارروائی ہو رہی ہے تو اس کی منظوری دینے والے وزیراعظم کو کیوں چھوڑا جا رہا ہے۔


 سپریم کورٹ میں این آر او عملدرآمد کیس کی سماعت بدھ کو ہو گی۔ سماء

میں

eid

uae

کیس

european

trapped

street

Tabool ads will show in this div