ایس اوپیزپرعمل کرکےہی کرونا کی دوسری لہرکومحدود کرسکتےہیں،اسدعمر

ہیلتھ ورکرزاور انتظامیہ کی کوششوں کو سراہتے ہیں

وفاقی وزیراسدعمر نے کہا ہے کہ کرونا کےخلاف برسرپیکار ہیلتھ ورکرزاور انتظامیہ کی کوششوں کو سراہتے ہیں،ایس اوپیز پرعمل درآمد کرکے ہی کرونا کی دوسری لہر کو محدود کرسکتے ہیں۔

اسلام آباد میں بدھ کووزیرمنصوبہ بندی اسد عمر نےاین سی او سی میں میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ جائزہ اجلاس میں کرونا صورتحال اور اقدامات پر تفصیلی غور ہوا اورجمعرات کووزیراعظم کی صدارت میں قومی رابطہ کمیٹی برائےکرونا کا اجلاس ہوگا جس میں چاروں صوبوں کے وزرائے اعلیٰ شریک ہونگے۔

اسد عمر نے کہا کہ کرونا کی پہلی لہر میں پاکستان کی حکمت عملی کوعالمی سطح پر سراہا گیا،ہمیں مستقبل کو مدنظر رکھتے ہوئے حکمت عملی اختیار کرنی ہے۔

اسد عمرنےبتایا کہ کرونا مثبت کیسزمیں اضافے سے اسپتالوں میں 2 ماہ میں مریضوں کی تعداد 4گنا بڑھ گئی اور اگر احتیاطی تدابیر پر عمل نہ کیا گیا تو اسپتالوں پردباؤ بڑھے گا۔

وزیر منصوبہ بندی کا کہنا تھا کہ عوام کی زندگیوں کے تحفظ کیلئے حکومت نے اہم اور مشکل فیصلے کیے،دوسری لہر میں بند کیے گئے شعبوں کیلئے ریلیف پیکج پر بھی غور کریں گے:۔

سیاسی معاملات پر بات کرتےہوئےاسد عمرنےکہا کہ جلسے کیلئے کرونا کا مذاق اڑانا قابل افسوس ہے،ہمیں عوام کو واضح احتیاطی پیغام دینا ہے،کرونا وباءکوئی مذاق نہیں،یہ ایک عالمی مسئلہ ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ جمہوری عمل میں سیاسی قیادت عوام کی زندگیوں اورمعیشت کو خطرے میں نہیں ڈالتی ہیں۔

CORONA

Tabool ads will show in this div