ملتان جلسہ سے قبل یوسف رضا گیلانی کا بیٹا گرفتار

پیپلز پارٹی کا احتجاج
Nov 25, 2020

ملتان پولیس نے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے جلسے کی تیاری میں مصروف علی موسیٰ گیلانی کو گرفتار کرلیا۔ پولیس کے مطابق انہوں نے کرونا وائرس کے ایس او پیز کی خلاف ورزی کی ہے۔

پیپلز پارٹی کے یوم تاسیس پر 30 نومبر کو ملتان میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کو جلسہ ہونے جارہا ہے۔ اس سلسلے میں پیپلز پارٹی کے کارکنان تیاریوں میں مصروف تھے کہ پولیس نے ان پر ایس او پیز کی خلاف ورزی کا مقدمہ درج کرتے ہوئے متعدد کارکنان کو گرفتار کرلیا۔

سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کا بیٹا علی موسیٰ گیلانی جب کارکنان کی گرفتاری کا سن کر لوہاری گیٹ تھانے پہنچا تو پولیس نے انہیں بھی حوالات میں بند کردیا۔ جس کے بعد تھانے کے باہر پیپلز پارٹی کے دیگر کارکنان بھی پہنچنا شروع ہوگئے اور اس وقت احتجاج جاری ہے۔

یوسف رضا گیلانی کی بیٹی فضا بتول گیلانی نے ٹوئٹر پر کہا کہ علی موسیٰ گیلانی ایف آئی آر میں نامزد نہیں تھے۔ حکومت نے پی ڈی ایم کے جلسے کے پیش نظر انہیں قانونی طور پر گرفتار کیا ہے۔

علی گیلانی کے بھائی قاسم گیلانی نے ٹوئٹر پر کہا کہ ’ میرا نام بھی جعلی ایف آئی آر میں نامزد تھا مگر میں تھانے پہنچا تو پولیس نے تھانے کا گیٹ بند کردیا اور خود بھی اندر بیٹھ گئے ہیں۔‘

پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما چودھری منظور احمد علی موسیٰ گیلانی کی گرفتاری کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت فاشسٹ ہتھکنڈوں پر اتر آئی ہے۔ علی موسیٰ گیلانی کی گرفتاری حکومتی بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے۔

چودھری منظور احمد نے الزام عائد کیا کہ پولیس نے ملتان ڈویژن کے جیالوں کی لسٹیں بنا کر کریک ڈاون شروع کر دیا ہے مگر گرفتاریاں ہمارے حوصلے پست نہیں کر سکتیں۔ پیپلز پارٹی کے یوم تاسیس کا جلسہ ہر صورت ہوگا۔

دریں اثنا تحریک انصاف کے زیر اہتمام بھی آج ملتان میں ریلی نکالی گئی مگر اس پر پولیس نے کوئی ایکشن نہیں لیا۔

گزشتہ روز بلاول بھٹو زرداری نے اعلان کیا تھا کہ پیپلز پارٹی 30 نومبر کو ملتان میں اپوزیشن جلسے کی میزبانی کرکے پارٹی کا یوم تاسیس منائے گی۔ انہوں نے کارکنان کو شرکت کی دعوت دیتے ہوئے ہدایت کی کہ کرونا وائرس سے متعلق ایس او پیز پر عمل کریں اور ماسک ضرور لگائیں۔

PDM

Tabool ads will show in this div